خطیب الاسلام، پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ حافظ آبادی

خطیب الاسلام، پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ حافظ آبادی
خطیب الاسلام، پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ حافظ آبادی

  


پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ حافظ آبادی 6جنوری 1948ءکو گوجرانوالہ کے قصبہ منڈیالہ تیگہ میں آفتاب ولایت حضرت پیر سید نواب علی شاہ ؒ کے ہاں پیدا ہوئے۔ سکول کی تعلیم کے بعد آپ ؒ دارالعلوم سراج العلوم گوجرانوالہ میں داخل ہو گئے، جس کے بعد آپ ؒ نے جامعہ محمدیہ رضویہ بھکھی شریف سے درس نظامی کی تعلیم حاصل کی۔ ان مدارس میں آپ ؒ کو بلند پایہ اور نابغہ ¿ روزگار اساتذہ سے کسب فیض کے مواقع میسر آئے۔ درس نظامی کی تکمیل کے بعد آپ ؒ نے خطابت کا باقاعدہ آغاز 1967ءمیں گوجرانوالہ شہر سے کیا، پھر آپ ؒ 1972ءمیں حافظ آباد تشریف لے آئے، جہاں آپ ؒ نے مرکزی جامع الفاروق سے عام خطباءاور واعظین کے برعکس ایسے منفرد انداز میں خطابت اور تبلیغ دین کا آغاز کیا کہ آپ ؒ کی سحر انگیز اور مسحور کن آواز کی وجہ سے ہزاروں عاشقان ِ رسول یہاں مستانہ وار آ کر اپنی روحانی پیاس بجھانے لگے۔ خطیب الاسلام کو مختلف سلاسل کی جانب سے خلافت بھی عطاءکی گئی، لیکن آپ ؒ نے ملک اور بیرون ملک ہزاروں کی تعداد میں مریدین ہونے کے باوجود پیری مریدی کو ذریعہ ¿ روزگار نہ بنایا، بلکہ ساری عمر آپ ؒ نام نہاد، جاہل اور کاروباری پیروں پر ننگی تلوار کی طرح برستے رہے۔

خطیب الاسلام پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ نے1974ءکی تحریک ختم نبوت اور1977ءکی تحریک نظام مصطفی میں بھی مجاہدانہ کردار ادا کیا۔ اس دوران آپ ؒ کو کئی ماہ تک قید و بند کی صعوبتیں بھی برداشت کرنا پڑیں، لیکن آپ ؒ کے پاﺅں میں ذرہ بھر بھی لغزش نہ آئی۔ آپ ؒ تادم زیست ملک کی بڑی بڑی خانقاہوں اور اہل سنت کے معروف مدارس کی تقریبات کی رونق بنے رہے۔ ان تقریبات میں جہاں آپ ؒ کا خطاب ہوتا، ہزاروں، لاکھوں سامعین آپ ؒ کی راہوں میں کھڑے ہو کر کئی کئی گھنٹے آپ ؒ کا انتظار کرتے۔

خطیب الاسلام نے تبلیغ دین اور اشاعت اسلام کے سلسلے میں امریکہ، یورپ اور مشرق وسطیٰ سمیت درجنوں ممالک کے دورے کئے، جہاں آپ ؒ کی تبلیغ سے متاثر ہو کر کثیر تعداد میں غیر مسلم حلقہ ¿ بگوش اسلام ہوئے۔ امریکہ میں کئی بار آپ ؒ نے عید میلاد النبی کے جلوس کی قیادت کی۔ ایک بار امریکہ کی ریاست نیوجرسی میں وہاں کے میئر برٹ شنڈلر نے آپ ؒ کی شخصیت اور فن ِ خطابت سے متاثر ہو کر آپ ؒ کو نیو جرسی شہر کی چابی“ اور تعریفی سرٹیفکیٹ سے نوازا۔ خطیب الاسلام اگرچہ1972ءسے ہی جے یو پی سے وابستہ چلے آ رہے تھے، لیکن آپ ؒ نے1988ءمیں پہلی بار حافظ آباد کے حلقہ پی پی79 سے پاکستان عوامی اتحاد کے ٹکٹ پر الیکشن لڑا۔ اس کے بعد آپ ؒ نے دو بار جے یو پی کے کوٹہ سے مسلم لیگ(ن) کے ٹکٹ پر شیر کے نشان کے ساتھ الیکشن لڑے۔

ملک بھر میں جب خود کش حملوں کے ذریعے معصوم اور بے گناہ لوگوں کو ہلاکتوں کا نشانہ بنایا جانے لگا تو آپ ؒ نے2009ءمیں کنونشن سنٹر اسلام آباد میں چیئرمین سنی اتحاد کونسل صاحبزادہ حاجی محمد فضل کریم کی قیادت میں علماءمشائخ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے نہ صرف خود کش حملوں کو حرام قرار دیا، بلکہ کالعدم تنظیموں کے خلاف کریک ڈاﺅن کا ایک جارحانہ انداز میں مطالبہ کیا آپ ؒ کو دہشت گردوںکی جانب سے سنگین نتائج کی دھمکیاں ملتی رہیں، لیکن آپ ؒ اُن دھمکیوں سے کبھی مرعوب نہ ہوئے۔

خطیب الاسلام پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ کو مطالعہ کا وسیع ذوق و شوق تھا۔ آپ ؒ کے دارالمطالعہ میں ہزاروں کی تعداد میں نایاب کتب موجود ہیں۔ اسی مطالعہ کا نتیجہ تھا کہ آپ ؒ نے قرآن پاک کی تفسیر کے ساتھ ساتھ شرح بخاری شریف سمیت کئی کتب تحریر کیں۔ دُنیائے خطابت کا یہ عظیم درخشندہ ستارہ 6اکتوبر 2010ءکو اپنے لاکھوں عقیدت مندوں کو داغِ مفارقت دے کر راہِ ملک عدم گیر ہو گیا۔ آپ ؒ کا جنازہ اُٹھا تو ہر طرف انسانوں کا ٹھاٹھیں مارتا سمندر دیکھائی دیتا تھا۔ آپ ؒ کو7اکتوبر کو نماز عصر سے قبل مرکزی جامع الفاروق میں واقع مزارِ پُرانوار کی لحد میں اُتارا گیا۔ جہاں آپ ؒ کا مزار پاک آج بھی زیارت اور فیوض و برکات کا باعث بنا ہوا ہے۔ پیر سید شبیر حسین شاہ ؒ حافظ آبادی کے دوسرے سالانہ عرس کی دو روزہ تقریبات 4اکتوبر 2012ءبروز جمعرات کو شروع ہو گئیں اور آج 5اکتوبر جمعتہ المبارک کو بھی جاری رہیں۔

مزید : کالم