محکمہ سی اینڈ ڈبلیونے 60مبینہ کرپٹ افسروں کی ترقی کیلئے اینٹی اکرپشن سے این او سی مانگ لئے

محکمہ سی اینڈ ڈبلیونے 60مبینہ کرپٹ افسروں کی ترقی کیلئے اینٹی اکرپشن سے این ...

  

لاہور(ارشد محمود گھمن /سپیشل رپورٹر)محکمہ سی اینڈ ڈبلیو نے 200ارب روپے کی مبینہ بدعنوانی میں ملوث گریڈ 18کے 60ایکسیئن کو ترقی دینے کیلئے محکمہ اینٹی کرپشن سے این او سی طلب کرلئے ۔ترقی کے منتظر افسروں نے محکمہ اینٹی کرپشن میں اپنے خلاف جاری انکوائریوں کو داخل دفتر کروانے کیلئے بھاگ دوڑ شروع کردی،جن افسروں کے خلاف کرپشن کی انکوائریاں زیرسماعت ہیں ان میں طارق محمود ملغانی ، سہیل اکرم ، محمد اکبر درانی ، محمد بخش سیال، غلام رسول ،جمیل بسرا،میاں اظہر، مقبول احمد طاہر ،نذیر احمد خان، اشفاق حسین، اعجاز احمد چیمہ، محمد طاہر ، اعجاز الحق گل ،حبیب الحق ، عمران اشرف، میاں محمد یونس، طیب منیر، افتخار احمد چودھری، ارشد محمود الحسن ، زاہد اشفاق، سید اطہر حسین بخاری، راؤ خورشید عالم ، محمد ریاض ، محمد ندیم خان، ظفر اقبال ،افتخار احمد اور محمد امجد وغیرہ شامل ہیں ۔تفصیلات کے مطابق محکمہ کمیونیکیشن اینڈ ورکس ڈیپارٹمنٹ پنجاب نے 9ریجن سے تعلق رکھنے والے 60ایگزیکٹو انجینئر ز کوگریڈ 19میں ترقی دینے کیلئے محکمہ اینٹی کرپشن سے این او سی طلب کرلئے ۔ذرائع کے مطابق ڈپٹی ڈائریکٹرایم اینڈ آر بلڈنگ راؤ خورشید عالم پربطور ایس ڈی او سگیاں پل میں مبینہ طور پر کروڑوں روپے کی کرپشن کا الزام ہے ۔جس پر کارروائی کیلئے ڈائریکٹر جنرل اینٹی کرپشن پنجاب کو احکامات صادر کئے گئے جبکہ راؤ خورشید عالم نے بطور ایکسیئن ہائی وے مکینیکل انجینئرنگ (گلبرک) شفٹنگ کیس میں 2ارب روپے کے سکریپ کو 72لاکھ روپے میں نیلام کرنے کیخلاف سی اینڈ ڈبلیو کی 3رکنی کمیٹی کارروائی کیلئے لیٹر نمبری SO-DIC&W 2-8/18 ،19اپریل2018ء کو بھجوایا جس میں مذکورہ افسر کوذمہ دار ٹھہرایا گیاااور2/10مقدمہ بھی درج ہوا تھاجبکہ عبدالاخلاق ایکسیئن (بلڈنگ 2) کے خلاف اینٹی کرپشن میں متعدد کرپشن کے مقدمات نمبر 28/2013اینٹی کرپشن سرگودھا،مقدمہ نمبر44/14گوجرانوالہ اور انکوائری نمبر233/16فیصل آباد میں درج ہیں۔زاہد اشفاق (ڈپٹی ڈائریکٹر ون ) چیف انجینئر ہائی وے نارتھ زون لاہور کے خلاف مقدمہ نمبر47/13،48/13،49/13اینٹی کرپشن بہاولپور اور انکوائری نمبر 107/15،410/16،1518/16بہاولپور،انکوائری نمبر 357/15، 850/15، 1204/15، 487/15، 600/15، 107/15،978/15،1304/15،612/16،1356/15 رحیم یارخان اینٹی کرپشن زیرسماعت ہیں ۔اعجاز چیمہ جس کے خلاف انکوائری نمبری94/2017، 302/2017،252/17 ،395/17،29/18،51/18،79/18سرگودھا میں چل رہی ہیں جو کہ محکمہ کی مبینہ ملی بھگت سے گریڈ 19میں ایس ای بہاولپور تعینات کردیا گیاہے،اسی طرح طارق محمود ملغانی (ایگزیکٹو انجینئر )ٹوبہ ٹیک سنگھ نے قومی خزانے سے لوٹ مار کرکے کروڑوں روپے کے اثاثہ جات بنا لئے ہیں اورخادم اعلیٰ دیہی روڈ پروگرام کے ترقیاتی منصوبوں میں پتھر پر خاکہ کی جگہ ریت ڈال کر کروڑوں روپے ہڑپ کئے ہیں اوراس وقت مذکورہ افسر کے 4پٹرول پمپس اور100ایکڑ سے زائد قیمتی اراضی ہے ،مذکورہ افسر کے خلاف میگا کرپشن کے حوالے سے متعدد محکمانہ ،اینٹی کرپشن اورنیب میں انکوائریاں جاری ہیں ،محمد جمیل بسرا (ایگزیکٹو انجینئر )سیالکوٹ کیخلاف بھی سمبڑیال ڈسکہ روڈ 2ارب روپے کی لاگت سے زیرتعمیر روڈ سمیت دیگر سٹرکوں پر ناقص مٹیریل استعمال کرنے کا الزام ہے جس کی اینٹی کرپشن گوجرانوالہ میں انکوائری بھی چل رہی ہے۔اس کے ساتھ دیگر ترقی کے منتظر مذکورہ افسران کے خلاف بھی کرپشن کر کے ناجائزاثاثہ جات بنانے کے الزامات پر انکوائریاں جاری ہیں، مذکورہ تمام افسران نے اگلے گریڈ میں ترقی پانے کیلئے اپنے سیاسی و دیگر اثرورسوخ استعمال کرنا شروع کردیئے ہیں تاکہ ان کیخلاف کروڑوں روپے کرپشن کی انکوائریاں داخل دفتر کر دی جائیں اور وہ اگلے گریڈ میں ترقی پاجائیں،تا ہم اس حوالے سے ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل ہیڈ کوارٹر حسن رضا کا موقف ہے کہ تمام افسران کی رپورٹ 9ریجن افس سے آ چکی ہے جس کی دو بارہ ری چیکنگ کی جا رہی ہے ۔

مزید :

صفحہ آخر -