بار ایٹ لاء کے حامل وکلاء کے تجریہ کی شرط بار کونسل سے جواب طلب

بار ایٹ لاء کے حامل وکلاء کے تجریہ کی شرط بار کونسل سے جواب طلب

  

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس قلندرعلی خان اور جسٹس عبدالشکورخان پرمشتمل دورکنی بنچ نے بارایٹ لاء کے حامل وکلاء کے ہائی کورٹ کے لائسنس کیلئے دوسالہ تجربے کی شرط رکھنے پرپاکستان بارکونسل اورخیبر پختونخوا بار کونسل سے جواب مانگ لیاہے عدالت عالیہ کے دورکنی بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز ضیاء الرحمان تاجک ایڈوکیٹ کی وساطت سے دائردرخواست گذاربیرسٹرافضل خان شنواری کی رٹ پرجاری کئے اس موقع پر عدالت کو بتایاگیاکہ درخواست گذار نے بارایٹ لاء کیاہے پاکستان بارکونسل نے 2016ء میں ایک نوٹی فکیشن جاری کیاہے جس کے تحت ہائی کورٹ کے لائسنس کے دوسالہ تجربہ لازم قراردیاہے جبکہ ایل ایل ایم کے امیدوار کیلئے پہلے یہ شرط نہ تھی اور ایل ایل ایم والے پہلے اس شرط سے مبراء تھے لہذاپاکستان بارکونسل کے فیصلے کوکالعدم قرار دیا جائے عدالت عالیہ نے ابتدائی دلائل کے بعد پاکستان بارکونسل اور خیبرپختونخوا بار کونسل کو نوٹس جاری کرکے جواب مانگ لیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -