پولیس اہلکاروں کو اغوا کرنے کا الزام ، محمود الرشید کے بیٹے کیخلاف قدمہ درج

پولیس اہلکاروں کو اغوا کرنے کا الزام ، محمود الرشید کے بیٹے کیخلاف قدمہ درج

  

لاہور(خبرنگار،سپیشل رپورٹر)پنجاب کے وزیرہاؤسنگ میاں محمودالرشیدکے بیٹے پرتھانہ غالب مارکیٹ میں مقدمہ درج کر لیا گیا۔مقدمہ پولیس اہلکاروں کواغوااورتشددکی دفعات کے تحت درج کر لیا گیا۔تھانہ غالب مارکیٹ میں درج ہونے والے مقدمہ کے مطابق پولیس اہلکاروں ندیم اقبال ، عثمان مشتاق اور عثمان سعیدنے 3روز قبل معمول کی گشت کے دوران ایل ڈی اے پارک غالب مارکیٹ کے قریب ایک سفید رنگ کی گاڑی کو چیک کیا جس میں صوبائی وزیر میاں محمودالرشید کا بیٹا میاں حسن اور ایک خاتون نیم برہنہ حالت میں مبینہ طور پر غلط حرکات کر رہے تھے۔ اہلکاروں نے انہیں تھانے جانے کیلئے کہا جس پر شراب کے نشہ میں دھت میاں حسن نے مزاحمت شروع کردی اور فون کرکے دوستوں کو بلا یا،میاں حسن نے ساتھیوں کے ہمراہ پولیس اہلکاروں کوتشدد کا نشانہ بناتے ہوئے نہ صرف سرکاری اسلحہ ، موبائل فون اور وائرلیس سیٹ چھینا بلکہ زبردستی اپنی گاڑی میں ڈال کرلے گئے۔دوسری جانب صوبائی وزیر ہاؤسنگ میاں محمود الرشید نے اپنے بیٹے سے متعلق میڈیا میں گردش کرنے والی خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ حقائق کو توڑ مروڑ کر بیان کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ سوموار ان کا بیٹا اپنے دوست کے پاس گلبرگ میں موجود تھا جہاں اسے فون آیا کہ اس کے دیگر دوست جو ایک چائے پارٹی میں جا رہے تھے، انہیں پولیس نے روکا، زدوکوب کیا اور زبردستی گاڑی میں بٹھالیا۔ پولیس اہلکاروں نے ان کو برہنہ کرنے کی کوشش کی اور غیر اخلاقی حرکات کا الزام لگاتے ہوئے پیسوں کا مطالبہ کیا۔ میرا بیٹا مدد کیلئے پہنچا تو پولیس اہلکاروں نے اپنے بچاؤ کیلئے حقائق کے برعکس مبنی ایف آئی آر درج کرا دی۔ انہوں نے کہا کہ میں اس سارے معاملے کی نہ صرف تحقیق کا مطالبہ کرتا ہوں بلکہ اپنی اور بیٹے کی طرف سے مکمل تعاون کا یقین دلاتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ اگر میرے بیٹے پر لگائے گئے الزامات میں صداقت ہوئی تو میں اپنی وزارت سے مستعفی ہونے کو تیار ہوں۔

مقدمہ درج/محمود الرشید

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -ملتان صفحہ آخر -