مہمند، شناختی کارڈ میں پتہ تبدیل کرنے کا طریقہ کار آسان بنایا جائے

مہمند، شناختی کارڈ میں پتہ تبدیل کرنے کا طریقہ کار آسان بنایا جائے

  

مہمند (نمائندہ پاکستان) مہمند، شناختی کارڈ میں پتہ تبدیل کرنے کا طریقہ کار آسان بنایا جائے۔ جنگ کی وجہ سے لوگوں نے نقل مکانی کی تھی جس کی وجہ سے اکثر لوگوں نے ملک کے دوسرے علاقوں میں رہائش اختیار کی تھی۔ ضلع مہمند پاک افغان سرحدی علاقے بائیزئی موسیٰ خیل کے عمائدین سابقہ اُمیدوار پی کے 104 حیات خان مہمند، ملک ذاہد، ملک فضل الہٰی، ملک عبدالولی اور ڈاکٹر جمعہ دین نے مہمند پریس کلب میں صحافیوں کے ساتھ باتیں کرتے ہوئے کہا کہ ضلع مہمند میں شناختی کارڈ اور ڈومیسائل بنانے کا طریقہ کار کو سخت بنایا گیا ہے۔ اس کو آسان بنایا جائے۔ کیونکہ نئے طریقہ کار میں قومی شناختی کارڈ میں پتہ تبدیل کرنے کیلئے ڈومیسائل شرط کیا ہے اور جن لوگوں کے شناختی کارڈ پتے ملک کے دوسرے علاقوں کے ہیں اُن لوگوں کا ڈومیسائل نہیں بنایا جاتا۔ مشران نے کہا کہ ضلع مہمند پاک افغان سرحدی علاقوں کے زیادہ تر لوگوں نے علاقے سے نقل مکانی کی تھی۔ جس کی وجہ سے متاثرہ لوگوں نے ملک کے دوسرے علاقوں میں عارضی طور پر رہائش پذیر ہونے کی وجہ سے شناختی کارڈ وہاں بنائے اُس وقت ایڈریس اُن علاقوں کے درج کئے گئے جہاں پر عارضی رہائش اختیار کیا تھا۔ اب لوگ واپس ضلع مہمند آرہے ہیں لیکن انتظامیہ نے شناختی کارڈ اور ڈومیسائل بنانے کا طریقہ کار کو سخت بنایا ہے۔ جس کی وجہ سے لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ انہوں نے ڈپٹی کمشنر ضلع مہمند افتخار عالم سے مطالبہ کیا کہ مذکورہ بالا مسئلے کا فوری طور پر کوئی حل نکالے۔ تاکہ لوگوں کو شناختی کارڈ کے حصول میں آسانی ہو۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -