سندھ حکومت کا جعلی زرعی ادویات کیخلاف کارروائی کافیصلہ 

سندھ حکومت کا جعلی زرعی ادویات کیخلاف کارروائی کافیصلہ 

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)سندھ حکومت کا صوبے میں جعلی زرعی ادویات اور بیج فروخت کرنے والی جعلساز کمپنیوں کے خلاف کارروائی کا فیصلہ، وزیر زراعت محمد اسماعیل راہو کی صدارت میں سندھ سیکریٹریٹ میں اہم اجلاس ہوا۔اجلاس میں سیکریٹری زراعت آغاظہیر، ڈی جی زراعت اورتمام اضلاع کے افسران نے شرکت کی۔اس موقع پر اسماعیل راہو نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وفاقی حکومت سندھ میں غیر معیاری سیڈ فروخت کرنے والی کمپنیز کے خلاف کارروائی نہیں کررہا کئی بارخط لکھنے پر بھی جواب نہیں دیا جاریا۔وفاقی حکومت جعلسازکمپنیوں کے خلاف ایکشن لے۔سندھ میں ایک سو سے زائد زرعی ادویات کی کمپنیوں کے خلاف ایکشن لیا گیا ہے۔سندھ کے تمام اضلاع میں افسران جعلساز کمپنیوں کے خلاف کارروائیاں کررہے ہیں۔فصلوں میں جعلی بیج اور ادویات استعمال ہونے کی اب بھی شکایات موصول ہورہی ہیں۔ اسماعیل راہونے کہا ہے کہ جعلی بیج اورادویات فروخت کرنے والی مافیا کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی،جو افسر کارروائی نہیں کریگا اسے معطل کیا جائیگا.انہوں نے مزید کہا کہ سندھ کے کاشتکاروں کاگزارا ہی فصل پر ہوتا ہے،18 ویں ترمیم کے بعد صوبے کا اختیار ہے کہ جعلساز کمپنیوں کے خلاف کارروائی کرے مگروفاق مداخلت کررہا ہے, سندھ میں جہاں جہاں فصلون کو نقصان پہنچا ہے معلومات لی جاری ہے ان کاشتکاروں کی مالی مددکی بھی کی جائیگی۔گھوٹکی میں ٹڈی دل 12سو ایکڑ فصل پرپائی گئی،اور تھرپار کرکے چند علاقون میں ٹڈی دل موجود ہے, جس کے خاتمے کے لئے اسپرے جاری ہے, ٹڈی دل کے خاتمے کہ لیے سندھ اور وفاقی حکومت مشترکہ اسپرے کررہی ہیں,ٹڈی دل سندہ سیاسی ماہ کے 15 تاریخ کوختم ہوجائیگی. افسران نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ جعلی زرعی ادویات, سیڈ اور فرٹیلائیزر پڑوسی ممالک سے پاکستان آرہی ہیں, کچھ ایسی کمپنیاں ہیں جو وفاق کے پاس رجسٹرڈ جہان وہ کارروائی نہیں کررہی

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -