مقبوضہ کشمیر بھارت کا کبھی حصہ تھا اور نہ رہے گا: فاروق حیدر

      مقبوضہ کشمیر بھارت کا کبھی حصہ تھا اور نہ رہے گا: فاروق حیدر

  

مظفرآباد(این این آئی) وزیراعظم آزادحکومت ریاست جموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیرہندوستان کا کبھی حصہ تھا نہ ہے اور نہ رہیگا،1959تک کوئی بھی ہندوستانی اگر مقبوضہ کشمیر آنا چاہتا تو اسے باقاعدہ پرمٹ لینا پڑتا تھا پاکستان کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق راے شمار ی کے ذریعے مسئلہ کے حل کا مطالبہ کرتا ہے جبکہ ہندوستان قابض اور جارح ہے پاکستان کی افواج آزادکشمیرکے شہریوں کی حفاظت اور ہمارے تقدس کی ضامن ہیں اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق راے شماری کے ذریعے مسئلہ کے حل کے علاوہ کشمیریوں کے لیے کوئی اور فارمولا قابل قبول نہیں،کشمیریوں نے پرامن جدوجہد کے تمام راستے بند ہونے پر مسلح جدوجہد شروع کی وزیراعظم آزادکشمیرپاکستان کے دورے پر آے سوڈانی فوج کے اعلی آفیسران کے تربیتی کورس کے شرکاء سے گفتگو کررہے تھے۔اس موقع پر سیکرٹری جموں وکشمیر لبریشن سیل منصور قادر ڈار نے وفد کو مسئلہ کشمیر اور اسکی موجودہ صورتحال کے بارہ میں بریفنگ دی۔ وزیر اعظم راجہ محمد فاروق حیدرخان نے کہاکہ او آئی سی نے کشمیریوں کو مایوس کیا ہم نے ہمیشہ امت مسلمہ کی بات کی اور ا س کے لیے اپنا بھرپور کردار ادا کیا مگر کشمیر کے معاملے پر اسلامی ممالک میں ماسواے ترکی،ملائیشیا کسی اور نے کوئی قابل ذکر کردار ادا نہیں کیا کشمیرمیں اکثریت مسلمانوں کی ہے اور اسی وجہ سے انتہا پسندہندو تنظیم کے نمائندے نریندر مودی مسلمانوں کے خلاف امتیازی سلوک روا رکھے ہوے ہیں ایک ایسے وقت میں جب مقبوضہ وادی کا دنیا سے رابطہ منقطع کر دیا گیا ہے،لوگوں پر نقل و حمل،کاروبار،تعلیم روزگار کے دروازے جبری طورپر بند کر دیے گئے ہیں اور انہیں گھروں میں مقید کر دیا گیا ہے دنیا بالخصوص عالم اسلام سے ہم یہ توقع رکھتے ہیں کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کے ساتھ اظہار یکجتی کرتے ہوے باسٹھ دنوں سے جاری کرفیو کے خاتمے کے لیے اپنا کردار ادا کرینگے کشمیریوں کا خون سستا نہیں دنیا کو اب نوٹس لینا ہوگا بصورت دیگر خطہ ہولناک جنگ کی طرف جارہا ہے۔

فاروق حیدر

واشنگٹن(این  این آئی) آزاد جموں و کشمیر کے صدر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ آزادکشمیر میں عسکریت پسندوں کو مقبوضہ کشمیر بھیجنے کے لیے کوئی لانچنگ پیڈ ہے اور نہ ہی عسکریت پسندوں کو مقبوضہ کشمیر میں لڑنے کے لیے تربیت دی جاتی ہے۔ بھارتی قومی سلامتی کے مشیر کی الزام تراشی مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کے غیر قانونی اقدامات اور دنیا کی مقبوضہ کشمیر کے واقعات سے توجہ ہٹانے کی بھونڈی کوشش ہے۔ واشنگٹن میں تاریخی یونین لیگ کی عمارت میں "فارن پالیسی انسٹیٹیوٹ اور ورلڈ افیئرز کونسل" کے زیر اہتمام" فرنٹ لائن آف نو کلیئر فلیش پوائنٹ" کے موضوع پر گفتگو کرتے ہوئے صدر آزاد کشمیر نے کہا کہ بھارت کی قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوول کا بیان بے بنیاد اور حقائق کے منافی ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں کوئی دہشت گرد ی نہیں بلکہ ریاست کی مقامی قیادت کی راہنمائی میں بھارت کے ظلم کے ستائے ہوئے لوگوں کی جدو جہد ہے۔ اور اگر وہاں کوئی دہشت گردی ہے تو وہ بھارتی حکومت کی ریاستی دہشت گردی ہے جو نہتے اور بے گناہ لوگوں کے خلاف گزشتہ سات دہائیوں سے جاری ہے۔ صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ بھارتی حکومت کی طرف سے مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے پانچ اگست کو اٹھائے گئے اقدمات غیر قانونی، جنیوا کنونشن اور انٹر نیشنل کریمنل کورٹ کے اصولوں کے منافی ہیں۔

مسعود خان

مزید :

صفحہ آخر -