دھرنے سے جمہوریت کا راستہ کھلے گا، بلاول کی رائے حقائق کے برعکس: جاوید ہاشمی 

دھرنے سے جمہوریت کا راستہ کھلے گا، بلاول کی رائے حقائق کے برعکس: جاوید ہاشمی 

  

ٹھٹھہ صادق آباد(نامہ نگار)بزرگ سیاستدان مخدوم جاوید ہاشمی نے کہا ہے کہ دھرنے سے جمہوریت کا راستہ کھلے گا مولانا فضل الرحمن کی آواز پر لبیک کہوں گا،دھرنے کے متعلق بلاول کی رائے حقائق کے برعکس ہے،محترمہ بے نظیر بھٹو نے بھی علامہ طاہر القادری کی زیر قیادت جدوجہد کی ہے،عمران خان کی یو این او میں تقریر قابل ستائش ہے لیکن ستر برس سے ایک ہی طرح کے الفاظ دوہرائے جا رہے ہیں انہوں نے ان خیالات کا اظہار جہانیاں میں  شیخ محمد سلیم کی والدہ محترمہ کی وفات پر تعزیت کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر شیخ محمد اختر،حکیم عبدالمجید سلیمانی،مولانا اسماعیل خلیق،محمد عارف سعید،چوہدری خلیل احمد گھمن،عمر احمد سلیمانی،عبداللہ عمران سمیت دیگر بھی موجود تھے۔مخدوم جاوید ہاشمی نے کہا کہ میرے مولانا مفتی محمود مرحوم کے ساتھ دیرینہ تعلقات تھے ان کے بیٹے مولانا فضل الرحمن کی اذان پر لبیک کہتے ہوئے دھرنے میں شرکت کروں گا اگر مولانا فضل الرحمن سے ایک ہزار شکایات ہیں تو دو ہزار ان کے حق میں بھی ہوں،ان کے دھرنے سے جمہوریت کی راہیں کھلیں گی۔انہوں نے کہا کہ دھرنے کے متعلق بلاول بھٹو کا یہ کہنا کہ اس میں مذہب کا عنصر زیادہ پایاجاتا ہے خلاف حقیقت ہے،محترمہ بے نظیر بھٹو نے بھی علامہ طاہر القادری کی زیر قیادت سیاسی جدوجہد کی ہے۔انہوں نے کہ عمران خان کی یو این او میں تقریر کا میں ذاتی طور پر معترف ہوں  لیکن اس تقریر میں ایک بھی لفظ عمران خان کا نہیں ہے میں نے بھی یو این او کے اس فورم پر تقریر کی ہے میں سمجھتا ہوں کہ ستر برس سے یو این او میں کی جانے والی تقاریر کے الفاظ ایک جیسے ہیں جن میں معمولی ردو بدل بھی نہیں کیا جا تا ہے،عمران خان سے پہلے حکمرانوں کی تقاریر نکلوا کر دیکھ لیں ان کے الفاظ بھی یہی ہیں جبکہ ان سے بعد میں آنے والے حکمرانوں کی تقاریر کے الفاظ بھی ایک جیسے ہی ہوں گے۔ملکی معیشت کا ذکر کرتے ہوئے جاوید ہاشمی نے کہا کہ ہمارا ملک پیچھے کی جانب اندھے کنویں کی جانب بڑھ رہا ہے ملکی معیشت تباہی کے دہانے پر پہنچ چکی ہے،ترقی کا پیہ جام ہو چکا ہے یہی وجہ ہے کہ پورا ملک مہنگائی بے روزگاری کے ہاتھوں پریشان ہے حکمرانوں نے آمریت کا اطلاق کررکھا ہے حق گوئی کی آزادی نہیں ہے۔کشمیر کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کشمیری مسلمان پھنسے بیٹھے ہیں اگر ان کے گھروں میں کوئی فوت ہو جائے تو وہ گھروں سے باہر نہیں نکل سکتے اور اپنے پیاروں کو گھروں کے صحن میں ہی دفن کرنے پر مجبور ہیں،ایسے میں تمام کشمیریوں کی نظریں پاکستان پر لگی ہوئی ہیں۔

جاوید ہاشمی 

مزید :

صفحہ اول -