یہی موقع ہے زمانے سے گزر جانے کا| شاد عظیم آبادی |

یہی موقع ہے زمانے سے گزر جانے کا| شاد عظیم آبادی |
یہی موقع ہے زمانے سے گزر جانے کا| شاد عظیم آبادی |

  

یہی موقع ہے زمانے سے گزر جانے کا

کوں اجل کیا کیا ساماں مرے مر جانے کا

کیا کہوں نزع میں میں اپنی خموشی کا سبب

رنج ہے وقت کے بے کار گزر جانے کا

موتیوں کا تھا خزانہ مری چشمِ تر میں

غم ہے دل کو انہیں دانوں کے بکھر جانے کا

لے چلی موت بصد شوق ہمیں سات اپنے

نہ ہوا جب کوئی ساماں ترے گھر جانے کا

دن بہ دن پاؤں کی طاقت میں کمی ہونے لگی

شاد سامان کرو اس دشت سے گھرجانے کا

شاعر: شاد عظیم آبادی

(مجموعۂ کلام: شاد عظٰم آبادی؛مرتبہ،قیصر خالد،سالِ اشاعت،2005 )

Yahi   Maoqa   Hay   Zamaanay   Say   Guzar   Jaanay   Ka

Koon   Ajal   Kaya   Kiya   Samaan   Miray   Mar    Jaanay   Ka

Kaya   Kahun   Nazaa   Men    Main   Apni   Khamoshi   Ka   Sabab

Ranj   Hay   Waqt   K   Bekaar   Guzar   Jaanay   Ka

Motion   Ka    Khazaana   Tha    Miri    Chashm-e-Tar   Men

Gham   Hay    Dil   Ko    Inhin   Daanon   K   Bikhar    Jaanay   Ka

Lay   Chali   Maot    Ba   Sad   Shaoq    Hamen   Saath   Apnay

Na   Hua   Jab   Koi   Samaan   Tiray    Ghar   Jaanay   Ka

Din   Ba   Din   Paaon   Ki   Taaqat   Men   Kami   Honay   Lagi

SHAD   Samaan   Karo   Is   Dasht    Say   Ghar    Jaanay   Ka

Poet: Shad    Azimabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -