اس مرے شکر کا ساقی بھی نہ مطلب سمجھا| شاد عظیم آبادی |

اس مرے شکر کا ساقی بھی نہ مطلب سمجھا| شاد عظیم آبادی |
اس مرے شکر کا ساقی بھی نہ مطلب سمجھا| شاد عظیم آبادی |

  

اس مرے شکر کا ساقی بھی نہ مطلب سمجھا

تب تو    پیمانۂ خالی کو لبالب سمجھا

کون پردے میں یہ اللہ کے ہے تیغ بکف

کس پہ یہ دست درازی ہے نہ مرحب سمجھا

کاش پہلے یہ سمجھتا کہ سمجھ قاصر ہے

جب سمجھ سے نہ چلا کام ترا تب سمجھا

نامۂ شوق ترا شیخ نے دیکھا بھی تو کیا

آپ جیسا ہے اسی طرح کامطلب سمجھا

خاک ہونے سے ہی جاتا رہا آنکھوں کا غبار

کیا غرض آپ کی تھی ہجر سے میں اب سمجھا

شاعر: شاد عظیم آبادی

(مجموعۂ کلام: شاد عظٰم آبادی؛مرتبہ،قیصر خالد،سالِ اشاعت،2005 )

Iss   Miray   Shukr   Ka   Saaqi   Bhi   Na   Matlab   Smajha

Tab   To   Paimaana -e-Khaali   Ko   Labaalab   Smajha

Kon   Parday   Men   Yeh   ALLAH   K   Hay   Taigh   Bakaff

Kiss   Pe    Yeh   Dast    Daraazi   Hay   Na   Marhab  Samjha

Kaash   Pehlay    Hi    Samajhta   Keh   Samajh   Qaasir   Hay

Jab   Samajh   Say    Na   Chalal    Kaam   Tira   Tab   Smajha

Naama -e-Shaoq   Tira   Shaikh   Nay   Dekha   Bhi   To   Kaya

Aaap   Jaisa   Hay   Isi  Tarah    Ka   Matlab   Smajha

Khaak   Honay   Say   Hi   Jaata   Raha    Aankhon   Ka   Ghubaar 

Kaya   Gharaz   Aap   Ki   Thi   Hijr   Say   Main   Ab   Smajha

Poet: Shad   Azimabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -