اب ایسے چاک پر کوزہ گری ہوتی نہیں تھی| شاہین عباس |

اب ایسے چاک پر کوزہ گری ہوتی نہیں تھی| شاہین عباس |
اب ایسے چاک پر کوزہ گری ہوتی نہیں تھی| شاہین عباس |

  

اب ایسے چاک پر کوزہ گری ہوتی نہیں تھی

کبھی ہوتی تھی مٹی اور کبھی ہوتی نہیں تھی

بہت پہلے سے افسردہ چلے آتے ہیں ہم تو

بہت پہلے کہ جب افسردگی ہوتی نہیں تھی

ہمیں اُن حالوں ہونا بھی کوئی آسان تھا کیا

محبت ایک تھی اور ایک بھی ہوتی نہیں تھی

تمہی کو ہم بسر کرتے تھے اور دن ماپتے تھے

ہمارا وقت اچھا تھا گھڑی ہوتی نہیں تھی

دیا پہنچا نہیں تھا ، آگ پہنچی تھی گھروں تک

پھر ایسی آگ ، جس سے روشنی ہوتی نہیں تھی

ہمیں یہ عشق تب سے ہے کہ جب دن بن رہا تھا

شبِ ہجراں جب اِتنی سرسری ہوتی نہیں تھی

ہمیں جا جا کے کہنا پڑتا تھا ، ہم ہیں ، یہیں ہیں

کہ جب موجودگی ، موجودگی ہوتی نہیں تھی

بہت تکرار رہتی تھی بھرے گھر میں کسی سے

کہ جس شے پر نظر پڑتی، وہی ہوتی نہیں تھی

کہانی کا جنہیں کچھ تجربہ ہے ، جانتے ہیں

کہ دن کیسے ہوا ، جب رات بھی ہوتی نہیں تھی

شاعر: شاہین عباس

(شاہین عباس کی وال سے)

Ab   Aisay   Chaak   Pe   Kooza   Gari   Hoti    Nahen   Thi

Kabhi   Hoti   Thi   Matti   Aor   Kabi   Hoti    Nahen   Thi

Bahut   Pehlay   Say   Afsurda    Chalay   Aatay   Hen   Ham  To

Bahut   Pehlay   Keh   Jab   Afsurdagi   Hoti    Nahen   Thi

Hamen   Un   Haalon   Hona   Bhi   Koi   Aasaan   Tha   Kaya

Muhabbat   Aik   Thi   Aor   Aik    Bhi   Hoti    Nahen   Thi

Tumhi   Ko   Ham   Basar   Kartay   Thay   Aor   Din   Maaptay   Thay

Hamaara   Waqt   Achha   Tha   Ghari   Hoti    Nahen   Thi

Diya    Pahuncha   Nahen    Tha   ,   Aag   Pahunchi   Thi   Gharon   Tak

Phir   Aisi   Aag   ,   Jiss   Say   Roshni   Hoti    Nahen   Thi

Hamen   Yeh   Eshq   Tab   Say   Hay   Keh   Jab   Din    Ban   Raha   Tha

Shab-e-Hijraan   Jab   Itni   Sarsari   Hoti    Nahen   Thi

Hamen   Ja   Ja   K   Kehna   Parrta   Tha   ,    Ham   Hen , Yahen  Hen

Keh   Jab   Mojoodgi    ,   Mojoodgi   Hoti    Nahen   Thi

Bahut    Takraar   Rehti   Thi   Bharay   Ghar    Men    Kisi   Say

Keh   Jiss   Shay   Pe   Nazar   Parrti   ,  Wahi   Hoti    Nahen   Thi

Kahaani   Ka   Jinhen   Kucch   Tajruba   Hay  ,    Jaantay   Hen

Keh   Din   Kaisay   Hua  ,   Raat   Bhi   Hoti    Nahen   Thi

Poet: Shaheen   Abbas

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -