جاری تھی ابھی دعا ہماری | شاہین عباس |

جاری تھی ابھی دعا ہماری | شاہین عباس |
جاری تھی ابھی دعا ہماری | شاہین عباس |

  

جاری تھی ابھی دعا ہماری 

اور ٹوٹ گئی صدا ہماری 

یاں راکھ سے بات چل رہی ہے 

تو شعلگی پر نہ جا ہماری 

جھونکا تھا گریز کے نشے میں 

دیوار گرا گیا ہماری 

دنیا میں سمٹ کے رہ گئے ہیں 

بس ہو چکی انتہا ہماری 

میں اور الجھ گیا ہوں تجھ میں 

زنجیر کھلی ہے کیا ہماری 

آ دیکھ جو ہم دکھا رہے ہیں 

آ بانٹ کبھی سزا ہماری 

گو ایک غبار میں ہیں دونوں 

وحشت ہے جدا جدا ہماری 

شاعر: شاہین عباس 

(شاہین عباس کی وال سے)

Jaari   Thi   Abhi   Dua   Haamri

Aor   Laot   Gai   Sadaa   Hamaari

Yaan    Raakh   Say    Baat    Chall    Rahi   Hay

Tu   Sholagi    Par   Na   Ja   Hamaari

Jhonka   Tha   Guraiz  K   Nashay   Men 

Dewaar   Gira   Gaya   Hamaari

Dunya   Men   Simat   K   Reh   Gaey   Hen

Bass   Ho   Chuki    Intahaa   Hamaari

Main   Aor   Ulajh   Gaya   Hun   Tuhj   Men

Zanjeer    Khuli   Hay   Kaya   Hamaari

Aa   Dekh   Jo   Ham   Dikha   Rahay   Hen

Aa   Baant    Kabhi   Sazaa   Hamaari

Go   Aik    Ghubaar   Men   Hen   Dono

Wehshat    Hay   Juda   Juda   Hamaari

Poet: Shaheen    Abbas

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -