نقش تھا اور نام تھا ہی نہیں | شاہین عباس |

نقش تھا اور نام تھا ہی نہیں | شاہین عباس |
نقش تھا اور نام تھا ہی نہیں | شاہین عباس |

  

نقش تھا اور نام تھا ہی نہیں 

یعنی میں اتنا عام تھا ہی نہیں 

خواب سے کام تھا وہاں کہ جہاں 

خواب کا کوئی کام تھا ہی نہیں 

سب خبر کرنے والوں پر افسوس 

یہ خبر کا مقام تھا ہی نہیں 

تہ بہ تہ انتقام تھا سر خاک 

انہدام انہدام تھا ہی نہیں 

ہم نے توہین کی قیام کیا 

اس سفر میں قیام تھا ہی نہیں 

اب تو ہے پر ہمارے وقتوں میں 

شیشۂ صبح و شام تھا ہی نہیں 

وہ تو ہم نے کہا کہ تم بھی ہو 

ورنہ کوئی نظام تھا ہی نہیں 

شاعر: شاہین عباس

(شاہین عباس کی وال سے)

Naqsh   Tha   Aor   Naam Tha    Hi   Nahen

Yaani   Main   Itna   Aam  Tha    Hi   Nahen

Khaab   Say   Kaam   Tha   Wahaan    Keh   Jahaan

Khaab   Ka   Koi   Kaam Tha    Hi   Nahen

Sab   Khabar   Karnay   Waalon   Par   Afsos

Yeh   Khabar   Ka    Maqaam  Tha    Hi   Nahen

Teh   Ba    Teh    Inteqaam   Tha   Sar-e- Khaak

Inhidaam   Inhidaam Tha    Hi   Nahen

Ham   Nay   Toheen    Ki   Qayaam   Kiya

Iss   Safar   Men   Qayaam Tha    Hi   Nahen

Ab   To   Hay   Par   Hamaaray   Waqton   Men

Sheesha-e-Subh-o-Shaam  Tha    Hi   Nahen

Wo   To   Ham   Nay    Kaha   Keh   Tum   Bhi   Ho

Warna    Koi   Nizaam   Tha    Hi   Nahen

Poet: Shaheen    Abbas

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -