بھارت کے نائب وزیر داخلہ کے بیٹے کی جانب سے 8کسانوں کو گاڑی تلے روند کر ہلاک کر نے کیخلاف احتجاج، نوجوت سدھو، پرینکا گاندگی سمیت  متعدد اپوزیشن رہنما گرفتار

بھارت کے نائب وزیر داخلہ کے بیٹے کی جانب سے 8کسانوں کو گاڑی تلے روند کر ہلاک ...

  

 اترپردیش(مانیٹرنگ دیسک، نیوزایجنسیاں)بھارت میں حکمران جماعت بی جے پی کے رہنماء کے بیٹے کی گاڑی تلے روندے جانیوالے 8 کسانوں کی ہلاکت پر احتجاج کرنیوا لے سدھو اور پریانکا گاندھی سمیت متعدد اپوزیشن رہنماؤں کو حراست میں لے لیا گیا۔ عالمی میڈیا کے مطابق بھارت میں مودی حکومت کی متنازع پالیسیوں کیخلاف احتجاج کے دوران 8 کسانوں کی ہلاکت پر اظہار یکجہتی کیلئے جانیوالے رہنماؤں نوجوت سنگھ سدھو اور کانگریس رہنما پریانکا گاندھی سمیت متعدد رہنماؤں کو گرفتار کرلیا گیا۔دریں اثناء پولیس نے اترپردیش، پنجاب بارڈر کو بند کرکے پنجاب اور چھتیس گڑھ کے وزرائے اعلیٰ کو بھی اتر پردیش میں داخلے سے روک دیا، اس دوران لکھنو میں پولیس اور سماج وادی پارٹی کے کارکنوں کے درمیان تصادم بھی ہوا۔گزشتہ روز بھارت میں کسانوں پر بی جے پی رہنما کے بیٹے نے گاڑی چڑھا دی، جس کے نتیجے میں 8افراد ہلاک متعدد زخمی ہوگئے۔ ریاست اتر پردیش میں کسان نائب وزیراعلی اجے مشرا کی آمد پر احتجاج کیلئے جمع ہوئے تھے، احتجاج کے دوران اچانک 3گاڑیاں تیزی سے آئیں اور وہاں موجود کسانوں کو روندتے ہو ئے چلی گئیں، جس پر مشتعل کسانو ں نے متعدد سرکاری گاڑیوں کو آگ لگادی،جبکہ کسان رہنما ؤ ں نے کہا گاڑی میں نائب وزیر داخلہ کا بیٹا موجود تھا جس نے یہ حرکت جان بوجھ کر کی، گزشتہ ہفتے کسان تحریک کو ایک سال مکمل ہونے پر بھارتی کسانوں نے ایک بار پھر پورے ملک کو بند کر دیا تھا۔ لاکھوں کسان تین نئے فارمنگ بلز پر عملدرآمد کیخلاف سراپا احتجاج ہیں، جس سے زرعی تجارت کے قوانین تبدیل ہوجائیں گے۔ کسان رہنماوں نے کہا ہے ایک سال کیا 6سال بھی لگ گئے تو متنازع قوانین رد کروا کر ہی واپس لوٹیں گے۔

سدھو گرفتار 

مزید :

صفحہ اول -