ڈاکٹروں نے اس بچے کے سینے پر یہ نقلی چھاتی بنا کر اس کی جان بچالی، مگر کیوں اور کیسے؟ ایسی تفصیلات کہ انسانی عقل حیران رہ جائے

ڈاکٹروں نے اس بچے کے سینے پر یہ نقلی چھاتی بنا کر اس کی جان بچالی، مگر کیوں ...
ڈاکٹروں نے اس بچے کے سینے پر یہ نقلی چھاتی بنا کر اس کی جان بچالی، مگر کیوں اور کیسے؟ ایسی تفصیلات کہ انسانی عقل حیران رہ جائے

  


نیویارک (نیوز ڈیسک) یوں تو ہر بیماری ہی تکلیف اور پریشانی کا سبب ہوتی ہے لیکن امریکی ریاست جارجیا میں جنم لینے والے ایک ننھے بچے کو ایسی خوفناک بیماری لاحق ہو گئی کہ جسے الفاظ میں بیان کرنا مشکل ہے۔ یہ بچہ چار سالہ ڈائیلان لٹل ہے جو پیدائشی طور پر ہی میلانو سائٹک نیوس نامی بیماری کا شکار ہے۔ یہ دردناک بیماری دنیامیں کم ہی دیکھنے میں آتی ہے لیکن جسے لاحق ہوجائے اس کی زندگی ناقابل بیان درد کی داستان بن جاتی ہے ۔

ڈائیلان جب پیدا ہوا تو اس کا تقریباً سارا جسم سیاہ رنگ کے گہرے دھبوں سے ڈھکا ہوا تھا۔ ڈاکٹروں نے بتایا کہ یہ دھبے گہرے رنگ کے مہاسے تھے جنہوں نے اس کے جسم کے 80 فیصد حصے کو ڈھانپ رکھا تھا۔ ان کی وجہ سے بچے کی حالت خوفزدہ کردینے والی نظر آتی تھی جبکہ سب سے تشویشناک بات یہ تھی کہ یہ دھبے کینسر کا سبب بن سکتے تھے۔

پیدا ہونے والے بھارتی بچے کا چہرہ ایسا کہ اُس کے اپنے سگے والدین اسے چھوڑ کر ہی بھاگ گئے، آخر ایسا کیا تھا؟ جان کر کوئی بھی اس حرکت پر افسردہ ہوجائے

ننھے بچے کی حالت دیکھ کر اس ماں کارہ اور باپ نکی پر غم کا پہاڑ ٹوٹ پڑا۔ کئی ماہ تک بیچارے اپنے لخت جگر کی حالت دیکھ کر آنسو بہاتے رہے لیکن پھر خوش قسمتی سے ڈاکٹروں نے بچے کی جان بچانے کے لئے ایک انوکھا حل نکال لیا۔ کارہ اور نکی کو بتایا گیا کہ خواتین میں نسوانی حسن کے اضافے کے لئے استعمال ہونے والی ایک تکنیک کو اس بچے کے علاج کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔

ڈاکٹروں نے ڈائیلان کا علاج اس تکنیک سے شروع کیا اور اس کے حیرت انگیز نتائج دیکھنے میں آئے۔ اس کے جسم پر جہاں کہیں صاف جلد کا کوئی ٹکڑا نظر آتا ہے اس میں ایک محلول بھر کر اسے پھیلا جاتا ہے۔ تین ماہ تک جلد کو پھیلانے کا عمل جاری رکھا جاتا ہے اور پھر پھیلی ہوئی جلد کو کاٹ کر اس جگہ لگایا جاتا ہے جہاں سے سیاہ جلد کاٹ کر علیحدہ کی جاچکی ہوتی ہے۔ڈائیلان کے اب تک 25 آپریشن کئے جاچکے ہیں اور اس کی جلد کا تقریباً نصف حصہ صاف ہوچکا ہے۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس کی جلد مکمل طور پر صاف ہونے تک یہ عمل جاری رکھا جائے گا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس