مودی کی چینی صدر سے ملاقات ،نیو کلیئر سپلائرز گرو پ اور سی پیک پر گلے شکوے

مودی کی چینی صدر سے ملاقات ،نیو کلیئر سپلائرز گرو پ اور سی پیک پر گلے شکوے

بیجنگ/ہانگ ژو( اے این این ) چین کے صدرشی جن پنگ سے بھارتی وزیراعظم نریندرمودی کی ملاقات،چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے کے بارے میں اپنے تحفظات اٹھائے ،نیو کلیئر سپلائرزگروپ (این ایس جی) میں بھارت کی رکنیت کیلئے حمایت کی درخواست بھی کی۔میڈیارپورٹ کے مطابق ہانگ ژومیں گروپ 20کے سربراہ اجلاس کے موقع پرچینی صدرسے ملاقات میں نیوکلیر سپلائرز گروپ (این ایس جی )میں بھارت کی رکنیت اور چین پاکستان اقتصادی راہداری جیسے اہم معاملات پر بات چیت کی ۔ انہوں نے این ایس جی میں بھارت کی شمولیت کیلئے ایک بار پھر چین کی حمایت مانگی جبکہ چین پاکستان اقتصادی راہداری کے منصوبے کے بارے میں بھارت کی تشویش سے صدرشی جن پنگ کوآگاہ کیا۔ نریندرمودی نے کہا کہ بھارت اور چین کی شراکت داری خطے بلکہ پوری دنیا کے فائدے میں ہے ۔اس موقع پر چینی صدر نے کہا کہ ان کا ملک بھارت کے ساتھ اچھے تعلقات چاہتا ہے اور وہ خود بھی بھارت اور چین کے مراسم کو آگے لے جانا چاہتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ تعلقات مشکل سے بنتے ہیں ہم انہیں بگڑنے نہیں دیں گے دونوں ملکوں کو ایک دوسرے کا احترام کرنا چاہیے اور اپنے اختلافات کو حل کرنے کے لئے بات چیت کا راستہ اپنانا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ ہم ایک دوسرے کی تشویش کو بھی سمجھتے ہیں۔ واضح رہے کہ پچھلے کچھ مہینوں کے دوران این ایس جی میں بھارت کی شمولت اور پاک چین اقتصادی راہداری کے منصوبے سی پیک کے معاملات پر نئی دہلی اور بیجنگ کے تعلقات کشیدہ ہوگئے تھے جس کے پیش نظر اس ملاقات کو کافی اہمیت دی جا رہی ہے ۔چند روز قبل چین نے کہا تھا کہ اگر بھارت نے پاکستان کے صوبہ بلوچستان میں سی پیک منصوبے کی راہ میں رکاوٹ کھڑی کرنے کی کوشش کی تو وہ خاموش نہیں بیٹھے گا۔ چینی صدراوربھارتی وزیراعظم کے درمیان گزشتہ تین ماہ کے دوران یہ دوسری ملاقات تھی۔

مزید : صفحہ اول