مبینہ کرپشن سے 15 ریلوے اسٹیشن ماسٹرز کے تبادلے‘ نوٹیفکیشن جاری

مبینہ کرپشن سے 15 ریلوے اسٹیشن ماسٹرز کے تبادلے‘ نوٹیفکیشن جاری

ملتان(جنرل رپورٹر)ڈویژنل ریلوے انتظامیہ نے مبینہ طور پر ایک ہی روز میں15اسٹیشن و اسسٹنٹ سٹیشن ماسٹرز کے تبادلے کردےئے مبینہ طور پر شعبہ پرسانل کے کلرکوں نے مرضی کے سٹیشنوں پر تبادلے کے لئے رشوت کے عوض کیس تیار کرکے قائم مقام ڈی ایس وقار احمد شاہد سے تبادلوں کا نوٹیفکیشن جاری کروادیا ذرائع کے مطابق تبادلہ کئے جانے والے اسٹیشن و اسسٹنٹ اسٹیشن ماسٹرز (بقیہ نمبر8صفحہ12پر )

میں ایسے بھی ملازمین شامل ہیں جنہوں نے 3سال کا عرصہ ایک ہی سٹیشن پر پورا نہیں کیا بعض کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ ان کے تبادلے کو ایک ماہ بھی مکمل نہ ہوا تھا اور وہ مرضی کے سٹیشن پر تبادلہ کروانے میں کامیاب ہوگئے‘ بتایا جاتا ہے کہ قائم مقام ڈی ا یس کو غفلت میں رکھتے ہوئے ایک ہی روز15اسٹیشن و اسسٹنٹ سٹیشن ماسٹرز کے تبادلے کروائے گئے ہیں ڈویژنل پرسانل آفیسر شاہد رضا کی طرف سے باقاعدہ طور پر تبادلوں کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا گیا ہے ذرائع کے مطابق تبادلوں کے باعث متاثر ہونے والے بیشتر ملازمین نے عدالت سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ریلوے ذرائع کے مطابق قائم مقام ڈی ایس تبادلے کا اختیار نہیں رکھتے جبکہ تبادلوں میں کسی انتظامی معاملہ کو بھی دخل نہ تھا مزید یہ کہ عرصہ3سال پورے ہونے سے قبل باہمی تبادلہ یا بیک سٹیشن تبادلہ کا اختیار چیف ایگزیکٹو ریلوے کے پاس نہیں ہے موجودہ تبادلوں میں سی ای او ریلوے سے مشاور ت کرنا بھی گوارا نہیں کیا گیا اور قائم مقام ڈی ایس کو غفلت میں رکھ کر تبادلے کروائے گئے ہیں۔دریں اثناء ڈویژنل پرسانل آفیسر شاہد رضا کا کہنا ہے کہ اسٹیشن و اسسٹنٹ اسٹیشن ماسٹرز کے تبادلوں کا کیس پہلے سے تیار تھا ‘ڈی ایس راؤ وقار کو تمام معاملات سے آگاہی ہے ریلوے انتظامیہ کے پاس ایک ہی روز میں صرف15نہیں 40تبادلوں کے اختیارات بھی ہیں اور ایسا کیا بھی جاتا رہا ہے ملازمین کی باہمی رضا مندی سے تبادلے کئے گئے ہیں بعض ملازمین تبادلوں کو غلط رنگ دینے کی کوشش کررہے ہیں۔

مزید : ملتان صفحہ آخر