’’یہ اس لیے کیا کیونکہ۔۔۔‘‘ برطانیہ میں 14سالہ لڑکی کا ریپ کرنے والے پاکستانیوں نے اس حرکت کی ایسی وجہ بتا دی کہ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

’’یہ اس لیے کیا کیونکہ۔۔۔‘‘ برطانیہ میں 14سالہ لڑکی کا ریپ کرنے والے ...
’’یہ اس لیے کیا کیونکہ۔۔۔‘‘ برطانیہ میں 14سالہ لڑکی کا ریپ کرنے والے پاکستانیوں نے اس حرکت کی ایسی وجہ بتا دی کہ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں پاکستانیوں کے ایک گروہ نے کئی کم عمر لڑکیوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بناڈالا۔ پراسیکیوٹر نے عدالت میں ملزموں کی اس گھناؤنی حرکت کی ایسی وجہ بتادی ہے کہ سن کر ہر کسی کا منہ کھلے کا کھلا رہ گیا۔ میل آن لائن کے مطابق نبیل خورشید اور اقبال یوسف سمیت درجن سے زائد پاکستانیوں کے اس گروہ نے 2002ء سے 2009کے دوران درجنوں کم عمر لڑکیوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا، جن میں ایک 14سال سے بھی کم عمر تھی۔ پراسیکیوٹر مشعیل کولبرن نے عدالت میں بتایا کہ یہ تمام ایسی لڑکیاں تھیں، جن کو گھر میں توجہ نہیں ملتی تھی اور ان کی شدید خواہش تھی کہ کوئی انہیں پیار کرے۔ ان کی اسی کمزوری کا ملزموں نے فائدہ اٹھایا۔ ایک ملزم کسی ایسی لڑکی سے دوستی کرتا اور پھرخود جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد اسے اپنے دوستوں کے حوالے کر دیتا اور وہ بھی اسے اپنی ہوس کا شکار بناتے۔‘‘

مشعیل کولبرن کا کہنا تھا کہ ’’ابتداء میں لڑکیاں یہ سوچ کر خوش ہوتیں کہ ایشیائی نوجوان کی ان سے دوستی ہوئی ہے۔ وہ بھرپور توجہ ملنے پر خوش ہوتیں جو انہیں گھر پر نہیں ملی ہوتی تھی۔ ان لڑکیوں کی اتنی عمر نہیں ہوتی تھی کہ وہ سمجھ سکیں کہ درحقیقت ملزم انہیں کس کام کے لیے تیار کر رہے ہیں۔‘‘ پراسیکیوٹر کے مطابق نبیل اور اقبال ایسی ہی ایک 14سالہ لڑکی کو شیرووڈ فاریسٹ میں لے گئے اور وہاں اسے منشیات دیں۔ انہوں نے اسے دھمکی بھی دی کہ اگر اس نے ان کے ساتھ جنسی تعلق قائم نہ کیا تو وہ اسے جنگل میں اکیلا چھوڑ کر واپس چلے جائیں گے۔‘‘رپورٹ نبیل، اقبال، اختر، تنویر علی، صالح اور دیگر ملزمان نے اپنے خلاف عائد الزامات کی تردید کی ہے۔ مقدمے کی کارروائی جاری ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /برطانیہ