پولٹری سے وابستہ صنعت کو استثنیٰ کے  باوجود جی ایس ٹی سمیت بجلی کا بل  بھیجنے پر میپکو حکام سے جواب طلب

   پولٹری سے وابستہ صنعت کو استثنیٰ کے  باوجود جی ایس ٹی سمیت بجلی کا بل  ...

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر) ہائیکورٹ ملتان بنچ کے جج جسٹس شکیل الرحمن (بقیہ نمبر40صفحہ 6پر)

خان نے پولٹری سے وابستہ صنعت کو استثنیٰ کے باوجود جنرل سیلز ٹیکس سمیت بجلی کا بل جاری کرنے کے خلاف درخواست پر میپکو حکام سے 24 ستمبر کو جواب طلب کرلیا ہے۔ فاضل عدالت نے پٹشنر کے موقف کو درست تسلیم کیا اور قرار دیا کہ پولٹری سمیت جن صنعتوں کو جنرل سیلز ٹیکس سے استثنیٰ حاصل ہے ان کے بجلی کے بلوں پر جی ایس ٹی نہ لگایا جائے اور انہیں نظر ثانی شدہ ں ل بھجوایا جائے۔ فاضل عدالت میں ملک بھر میں پولڑی کا کام کرنے والے محمد اسلم نے فیڈریشن آف پاکستان کے خلاف رٹ درخواست دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ پولٹری سیکٹر کو جی ایس ٹی سے خصوصی طور پر استثنیٰ حاصل ہے لیکن میں پکو انہیں ہر بل میں جی ایس ٹی لگا کر بھیجتا ہے جو کہ غیر قانونی ہے۔ پٹشنر کے وکلاء  سید اطہر حسن بخاری اور حبیب اللّٰہ ملک نے کہا کہ ملتان کے علاوہ انہوں نے لاہور اور اسلام آباد میں بھی بجلی کے بلوں پر عائد جی ایس ٹی کو چیلنج کیا ہوا ہے۔ مگر میں پکو غیر قانونی طور پر جی ایس ٹی وصول کر رہا ہے۔گزشتہ ماہ کے بل میں بھی چار لاکھ 17 ہزار روپے کا جی ایس ٹی لگایا گیا فاضل عدالت نے کہا کہ جن صنعتوں اور بالخصوص پولٹری کو جی ایس ٹی سے استثنیٰ حاصل ہے ان کے لیے الگ بل جاری کیے جائیں۔ فاضل عدالت کو حبیب اللّٰہ ملک نے عدالت کو لاہور اور اسلام آباد کی عدالتوں سے جاری فیصلوں بارے آگاہ کیا اور استدعا کی کہ وصول شدہ جی ایس ٹی واپس دلایا جائے اور آئندہ بھی شامل نہ کیا جائے۔

جواب طلب

مزید :

ملتان صفحہ آخر -