کمشنر ملتان جاوید اختر نے چارج سنبھال لیا‘ پولیس دستے کی سلامی 

  کمشنر ملتان جاوید اختر نے چارج سنبھال لیا‘ پولیس دستے کی سلامی 

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر)نئے تعینات کمشنر ملتان ڈویثرن جاوید اختر محمود نے عہدے کا چارج سنبھال لیا۔کمشنر آفس پہنچنے پر پولیس کے چاک و چوبند دستے نے سلامی (بقیہ نمبر21صفحہ 6پر)

دی۔کمشنر جاوید اختر محمود نے سیٹ سنبھالتے ہی سائلین سے ملاقات کی اور مسائل سنے۔انہوں نے کہا کہ اولیاء کرام کی دھرتی کے باسیوں کی خدمت کرنے کا عزم لیکر عہدہ سنبھالا۔کمشنر آفس کے دروازے جائز کاموں کیلئے ہر خاص و عام کیلئے کھلے ہیں۔حکومت پنجاب کی اوپن ڈور پالیسی کے تحت میرٹ پر شہریوں کے مسائل حل کرنا ترجیح ہے۔کرپشن اور سرخ فیتہ کلچر کے عادی افسر و اہلکار احتساب کیلئے تیار رہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ڈویثرن میں مثالی صفائی،بیوٹیفکیشن اور انفراسٹرکچر کی بحالی سمیت صحت و تعلیم پر خصوصی فوکس ہوگا جبکہ انسداد تجاوزات آپریشن، وال چاکنگ کے خلاف کریک ڈاؤن اور کتا مار مہم بھرپور طریقے سے شروع کی جائے گی۔ کمشنر جاوید اختر محمود نے ڈویثرن بھر کے ڈپٹی کمشنرز،ایڈیشنل کمشنرز اور اسسٹنٹ کمشنرز سمیت انتظامی افسران کا اجلاس طلب کر لیا جس کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ شہریوں کا سرکاری اداروں پر اعتماد بحال کرنے کیلئے موثر اقدامات ناگزیر ہیں۔عوام کیلئے فرد کا حصول خواب بن گیا ہے،ریونیو معاملات میں بہتری لائی جائے۔انہوں نے الٹی میٹم دیتے ہوئے کہا کہ کاغذی کارروائیوں پر یقین کرنے کے بجائے عوام کے ذریعے کارکردگی کا احتساب کرونگا۔کمشنر کو اجلاس میں ترقیاتی منصوبوں اور اضلاع کی کارکردگی پر تفصیلی بریفنگ بھی دی گئی۔ دریں اثناء کمشنر ملتان ڈویثرن جاوید اختر محمود نے محکموں کی کارکردگی جانچنے کیلئے منفرد انداز اپنا لیا۔انہوں نے چارج سنبھالتے ہی عام شہری بن کرمختلف محکوموں کے کنٹرول رومز کو ٹیلی فون کیا اور فلڈ کنٹرول روم سمیت دیگر کنٹرول رومز کی افادیت کا مشاہدہ کیا۔ کمشنر جاوید اختر محمود نے کہا کہ فرضی رپورٹس پر یقین کرنے کے بجائے فیلڈ میں رہنے والاافسر ہوں۔روایتی افسر شاہی پالیسی کے بجائے عوام کے مسائل حل کرنے کا سسٹم بنائیں گے۔پرچی سسٹم کو ختم کر دیا ہے،ہر شہری کیلئے میرے دفتر کے دروازے کھلے ہیں اور ڈویڑن کے کسی دفتر میں پرچی سسٹم برداشت نہیں کروں گا۔شہریوں کی جانب سے کمشنر کے پہلے دن کے اقدامات پر خوشی کا اظہار کیا گیا۔

سلامی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -