اساتدہ کے دور دراز علاقوں میں تبادلے  عدالت میں چیلنج‘ محکمہ تعلیم سے جواب طلب

     اساتدہ کے دور دراز علاقوں میں تبادلے  عدالت میں چیلنج‘ محکمہ تعلیم سے ...

  

 ملتان (خصو صی رپورٹر) ریشنالائزیشن کی آڑ میں سینکڑوں خواتین اور مرد اساتذہ کے دور دراز علاقوں میں تبادلے کے (بقیہ نمبر26صفحہ 6پر)

احکامات کو عدالت عالیہ میں چیلنج کر دیا گیا۔ 30 سے زائد درخواستوں کی سماعت کرتے ہوئے ہائیکورٹ ملتان بنچ کے جج جسٹس شکیل الرحمن خان نے محکمہ تعلیم حکام سے 8 ستمبر کو جواب طلب کرلیا ہے۔ قبل ازیں فاضل عدالت میں پٹشنزر کے وکلاء راجہ نوید اعظم، طارق محمود ڈوگر، اعجاز احمد طور، مدثر الطاف قریشی اور عبدالسلام علوی نے موقف اختیار کیا تھا کہ محکمہ تعلیم کی بیوروکریسی نے آن لائن تبادلوں اور ریشنلائزیشن کی آڑ میں سینکڑوں مرد و خواتین کو دور دراز کے علاقوں میں تبدیل کردیا ہے جس وجہ سے خواتین کے لیے سروسز جاری رکھنا مشکل ہی نہیں نہ ممکن ہوگیا ہے۔ ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے سیکرٹری ایجوکیشن اور دیگر حکام سے آٹھ ستمبر کو جواب طلب کر لیا ہے۔

محکمہ تعلیم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -