دوست غم خواری میں میری سعی فرماویں گے کیا

دوست غم خواری میں میری سعی فرماویں گے کیا
دوست غم خواری میں میری سعی فرماویں گے کیا

  

دوست غم خواری میں میری سعی فرماویں گے کیا

زخم کے بھرنے  تلک ناخن نہ بڑھ آویں گے کیا

بے نیازی حد سے گزری بندہ پرور کب تلک

ہم کہیں گے حال دل اور آپ فرماویں گے ،کیا؟

حضرت ناصح گر آویں دیدہ و دل فرش راہ

کوئی مجھ کو یہ تو سمجھا دو کہ سمجھاویں گے کیا

آج واں تیغ و کفن باندھے ہوۓ جاتا ہوں میں

عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لاویں گے کیا

گر کیا ناصح نے ہم کو قید اچھا یوں سہی

یہ جنون عشق کے انداز چھٹ جاویں گے کیا

خانۂ زاد زلف ہیں زنجیر سے بھاگیں گے کیوں

ہیں گرفتارِ وفا  زنداں سے گھبراویں گے کیا

ہے اب اس معمورے میں قحطِ غمِ الفت اسد

ہم نے یہ مانا کہ دلی میں رہیں، کھاویں گے کیا

شاعر: مرزا غالب

Dost Gham Khaari Men Meri Saee Farmaaven gay Kia

Zakhm K Bharnay Talak Naakhun  Na Barrh Aaaven Gay Kia

Benayaazi Had Say Guzri , Banda Parwar Kab Talak 

Ham Kahen Gay Haal  e  Dil Aap Farmaaven Gay , Kia

Hazrat  e  Naaseh  Gar Aaven , Deeda  o Dil Farsh  e  Rah

Koi Mujh Ko Yeh To Samjha Do  Keh Samjhaaven Gay Kia

Aaj Waan Taigh  o  Kafan Baandhay Huay Jaat Huan Main 

Uzer Meray Qatl Karnay Men Wo Ab Laaven Gay Kia

 Gar Kia  Naaseh Nay Ham Ko Qaid , Acha , Yun Sahi

Yeh Junun  e  Eshq K Andaaz Chhutt  Jaaven Gay Kia

Khaana Zaad  e  Zulf Hen , Zangeer Say Bhaagay Gay Kiun

Hen Giriftaar  e   Wafa Zindaan Say Ghabraaven Gay Kia

Hay Ab Iss Mamooray Men Qeht  e  Gham   e Ulfat ASAD

HamNay Maana Keh Dili Men Rahen  ,  Khaaven Gay Kia

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -