یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا

  

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا

اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

ترے وعدے پر جیے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا

کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا

کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا

کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیر نیم کش کو

یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا

یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح

کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا

رگ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا

جسے غم سمجھ رہے ہو یہ اگر شرار ہوتا

غم اگرچہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے

غم عشق گر نہ ہوتا غم روزگار ہوتا

کہوں کس سے میں کہ کیا ہے شب غم بری بلا ہے

مجھے کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا

ہوئے مر کے ہم جو رسوا ہوئے کیوں نہ غرق دریا

نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا

اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا

جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا

یہ مسائل تصوف یہ ترا بیان غالبؔ

تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا

شاعر: ٘مرزا غالب

Yeh Na Thi Hamaari Qismat Keh Visaal  e  Yaar Hota

Agar Aor Jeetay Rehtay Yahi Intezaar Hota

Tiry Waaday Par Jiay Ham To Yeh Jaan Jhoot Jaana

Keh Khushi Say Mar Na Jaatay Agar Aitabbar Hota

Tiri naazuki Say Jaan KEh Bandha hay Ehd  e  Booda

Kabhi Tu  Na Torr Sakta ,Agar Ostawaar Hota

Koi Meray Dil Say Poochhay keh Tiray Teer  e  Neemkash Ko 

Yeh Khalish Kahaan Say Hoti Jo Jigar K Paar Hota

Yeeh kahaan Ki Dosti Hay Keh Banay Hen Dost Naaseh

Koi Chaara Saaz Hota  , Koi Ghamgusaar Hota

Rag  e  Sang Say Tapakta  Wo Lahu Keh Phir Na Thamta

Jisay Gham Samajh Rahay Yeh Agar Sharaar Hota

Gham Agarcheh Jaa Gusal Hay Pa kahaan Bachen Keh Dik Hay

Gham  e   Eshq Agar Na Hota Gham  e  Rozgaar Hota

Kahun Kiss Say Main Keh Kia Hay, Shab  e  Gham Buri Balaa Hay

Mujhay Kia Bura Tha Marna Agar Aitbaar Hota

Huay Mar K Ham Jo Ruswaa , Huay Kiun Na Gharq  e  Darya

Na Kabhi Janaaza Uthta  Na Kahen Mazaar Hota

Usay Kon Daikh Sakta Keh yagaana Hay Wo Yakta

Jo Dooi Ki Bu Bhi Hoti To Kahen Dochaar Hota

Yeh Masaail  e  Tasawuf , Yeh Tira Bayaan GHALIB

Tujhay Ham Wali Samajhtay Jo Na Baada Khaar Hota

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -