پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا

پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا
پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا

  

در خور قہر و غضب جب کوئی ہم سا نہ ہوا

پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا

بندگی میں بھی وہ آزادہ و خودبیں ہیں کہ ہم

الٹے پھر آۓ در کعبہ اگر وا نہ ہوا

سب کو مقبول ہے دعویٰ تری یکتائی کا

روبرو کوئی بت آئنہ سیما نہ ہوا

کم نہیں نازش ہم نام چشم خوباں

تیرا بیمار برا کیا ہے گر اچھا نہ ہوا

سینہ کا داغ ہے وہ نالہ کہ لب تک نہ گیا

خاک کا رزق ہے وہ قطرہ کہ دریا نہ ہوا

نام کا ہے مرے   جو دکھ کہ کسی کو نہ ملا

کام کا ہے مرے  وہ جو فتنہ کہ برپا نہ ہوا

ہر بن مو سے دمِ ذکر نہ ٹپکے خوں ناب

حمزہ کا قصہ ہوا عشق کا چرچا نہ ہوا

قطرے میں دجلہ دکھائی نہ دے اور جزو میں کل

کھیل لڑکوں کا ہو ا، دیدۂ بینا نہ ہوا

تھی خبر گرم کہ غالب کے اڑیں گے پرزے

دیکھنے ہم بھی گئے تھے پہ تماشا نہ ہوا

شاعر: مرزا غالب

Dar Khor Qehr  o Ghazab Jab Koi Ham Sa Na Hua

Phir Ghalat Kia Hay Keh Ham Sa Koi Paida na Hua

Bandagi Men Bhi Wo Azaada  o  Khud Been Hen Keh Ham

Ultay Phir Aaey Dar  e  Kaaba Agar Waa Na Hua

Sab Ko Maqbool Hay Daawa Tiri Yaktaaee Ka 

Rubaru Koi Bur  e  aaina Seema Na Hua

Kam Nahen Naazish Hamnaami Chashm  e  Khoobaan

Tira Bemaar Bura Kia Hay Agar Acha Na Hua

Seenay Ka DaaghHay Wo Naar Keh Lab Tak Na Gia

Khaak Ka Rizq Hay Wo Qatra Keh Darya na Hua

Naam Ka Hay Miray Wo Dukh , Jo Kisi Ko Na Mila

Kaam Ka Hay Miray Wo Fitna Keh barpaa na Hua

har Ban Moo Say Dam  e  Zikr Na Tapkay Khunaab

Hamza Ka Qissa Hua, Eshq Ka Charcha Na Hua

Qatray Men Dajla Dikhaaee Na Day Aor Juzv  Men Kull

Khail Larrkon K Hua , Deeda  e  Beena Na Hua

Thi Khabar Garm Keh GHALIB K Urren Gay Purzay

Dekhnay Ham Bhi Gaey Thay Pa Tamaasha Na Hua

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -