گر نہ اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا

گر نہ اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا
گر نہ اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا

  

گر نہ اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا

بے تکلف، داغِ مہ  مُہرِ دہاں ہوجائے گا

زہرہ گر ایسا ہی شامِ ہجر میں ہوتا ہے آب

پر توِ مہتاب سیلِ خانماں ہوجائے گا

لے تو لوں سوتے میں اس  کے پاؤں کا بوسہ، مگر

ایسی باتوں سے وہ کافر بدگماں ہوجائے گا

دل کو ہم صرفِ وفا سمجھے تھے، کیا معلوم تھا

یعنی یہ پہلے ہی نذرِ امتحاں ہوجائے گا

سب کے دل میں ہے جگہ تیری، جو تو راضی ہوا

مجھ پہ گویا، اک زمانہ مہرباں ہوجائے گا

گر نگاہِ گرم فرماتی رہی تعلیمِ ضبط

شعلہ  خس میں، جیسے خوں  رگ میں، نہاں ہوجائے گا

باغ میں مجھ کو نہ لے جا ورنہ میرے حال پر

ہر گلِ تر  ایک "چشمِ خوں فشاں" ہوجائے گا

واۓ گر میرا  ترا  انصاف محشر میں نہ ہو

اب تلک تو یہ توقع ہے کہ واں ہوجائے گا

فائدہ کیا؟ سوچ، آخر تو بھی دانا ہے اسدؔ

دوستی ناداں کی ہے، جی کا زیاں ہوجائے گا

شاعر: مرزا غالب

 Gar N Andoh  e  Shab   e  Furqat Bayaan Ho Jaaey Ga 

Be Takalluf Daagh  e  Mehm Mohr  e  Dahaan Ho Jaaey Ga

Zahraa Gar Aisa Hi Shaam  e  Hijr Men Hota Hay Aab

Partav  e mahtaab  Seil  e  Khaanumaa Ho Jaaey Ga

Lay To Lun Sotay Men Uss K Paaun Ka Bosa Magar   

Aisi Baaton Say Wo Kaafir Badgumaan  Ho Jaaey Ga

Dil Ko Ham Sarf  e  Wafa Samjhay Thay Kia Maloom Tha

Yaani Yeh Pehlay Hi Nazr  e  Imtehaan Ho Jaaey Ga

Sab K Dil Men Hay Jagah Teri Tu Jo Raazi Hua

Mujh Pe Goya Ik Zamaana Mehrbaan Ho Jaaey Ga

Gar Nigaah  e  Karam Farmaati Rahi Taleeem  e  Zabt

Shola Khass Men Jaisay Khun Rag Men nihaan Ho Jaaey Ga

Baagh Men Mujh Ko Na Lay Jaa Warna Meray haal Par

har Gul  e  Tar Tira Ik Chashm  e  khun Fashaan Ho Jaaey Ga

Waaey Gar Mera Tira Insaaf Mehshar Men Na Ho

Ab Talak To Yeh tawaqqo Hay Keh Waan Ho Jaaey Ga

faaida Kia Soch aakhir Tu Bhi Daana Hay ASAD

Dosti Nadaan ki Hay , Ji Ka Ziyaan Ho Jaaey Ga

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -