جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا 

جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا 
جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا 

  

جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا 

تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا 

اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخیِ ناز 

جوہرِ آئینہ کو طوطیِ بسمل باندھا 

یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا 

عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا 

نہ بندھے تِشنگیِ ذوق کے مضموں، غالبؔ 

گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا

شاعر: مرزا غالب

Jab Ba Taqreeb  e  Safar Yaar Nay Mehmill Baandha 

Tapish  e  Shaoq Nay Zarray Pe Ik Dil Baandha

Ehl  e  Beenish Nay ba Hairat  Kada  e  ShoKhi   e  Naaz 

Johar  e  Aaina Ko Tooti  e  Bismill Baandha

Yaas  o  Umeed  Nay Yak Arbadaa Medaaan maanga

Ejz   e Himmat Nay Talism  e  Dil  e  Saail Baandha

Na Band Hay Tashnagi  e  Shoq K Mazmun, GHALIB

Garcheh  Dil Khol K Darya Ko Bhi Saahil Baadha

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -