نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

  

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

ڈُبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

ہُوا جب غم سے یوں بے حِس تو غم کیا سر کے کٹنے کا

نہ ہوتا گر جدا تن سے تو زانو پر دھرا ہوتا

ہوئی مدت کہ غالبؔ مرگیا، پر یاد آتا ہے

وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

شاعر: مرزا غالب

Na Tha Kuch  To Khuda Tha  Kuch Na Hota To Khuda Hota

Daboya  Mujh Ko Honay Men  , Na Hota main To Kia Hota

Hua Jb Gham Say Yun BeGiss To Gham Kia Sar K Kattna y Ka

Na Hota Gar Juda tan Say To Zaano Par Dharaa Hota

Hui Muddat Keh GHALIB Mar Gia Par Yaad Aata Hay

Wo har Ik Baat Par Kehna Keh Yun Hota To Kia Hota

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -