وہ مِری چینِ جبیں سے غمِ پِنہاں سمجھا

وہ مِری چینِ جبیں سے غمِ پِنہاں سمجھا
وہ مِری چینِ جبیں سے غمِ پِنہاں سمجھا

  

وہ مِری چینِ جبیں سے غمِ پِنہاں سمجھا

رازِ مکتُوب بہ بے ربطیِ عُنواں سمجھا

یک الِف بیش نہیں صیقلِ آئینہ ہنُوز

چاک کرتا ہُوں مَیں جب سے کہ گریباں سمجھا

ہم نے وحشت کدہِ بزمِ جہاں میں جُوں شمع

شعلہِ عِشق کو اپنا سر و ساماں سمجھا

شرحِ اسبابِ گرفتاریِ خاطِر مت پُوچھ

اِس قدر تنگ ہُوا دِل کہ مَیں زِنداں سمجھا

بد گُمانی نے نہ چاہا اُسے سرگرمِ خِرام

رُخ پہ ہر قطرہِ عرق دیدہِ حیراں سمجھا

عِجز سے اپنے یہ جانا کہ وہ بد خُو ہوگا

نبضِ خس سے تپشِ شعلہِ سوزاں سمجھا

سفرِ عِشق میں کی ضُعف نے راحت طلبی

ہر قدم سائے کو مَیں اپنے شبِستان سمجھا

تھا گُریزاں مِژہِ یار سے دِل تا دمِ مرگ

دفعِ پِیکانِ قضا اِس قدر آساں سمجھا

دِل دیا جان کے کیوں اُس کو وفادار اسدؔ

غلطی کی کہ جو کافر کو مُسلماں سمجھا

شاعر: مرزا غالب

Wo Miri Be Chain Jabeen Say Gham  e  Pinhaan Samjha

Raaz   e  Maktoob  Ba Berabti  e  Unwaan Samjha

Yak Alif paish Nahen , Saiqal  e  Aaina Hunooz

Chaak Karta Hun Main Jab Say Keh Girebaan Samjha

Sharh  e  Asbaab  e  Giraftaari  e  Khaatir  Mat Pooch

Iss qadar Tang Hua Dil Keh Main Zindaaan Samjha

Badgumaani Nay Na Chaaha Usay Sar garm  e  Kharaam

Rukh Pe Har Qatra  e  Arq Deeda  e  Haraan Samjha

Ijz Say Apnay Yeh Jaana Keh Wo Bad Khu Ho Ga

Nabaz  e  Khass Say Tapish  e  Shola  e   Sozaan Samjha

Safar   e  Eshq Men Ki Zuof Nay raahat Talabi

Har Qadam Saaey Ko Main Apnay Shabistaan Samjha

Tha Gurezaan Muzaa  e  Yaar Say Dil Ta Dam  e  Marg

Daf  e  Paikaan  e  Qazaa Iss Qadar Aasaan Samjha

Dil Dia Jaan K Kiun Iss Ko Wafaadaar ASAD

Galati Ki Keh Jo Kaafir Ko Musalmaan Samjha

Poet: Mirza  Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -