ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا
ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

  

ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

آپ آتے تھے، مگر کوئی عناں گیر بھی تھا

تم سے بے جا ہے مجھے اپنی تباہی کا گلہ

اس میں کچھ شائبۂ خوبیِ تقدیر بھی تھا

تو مجھے بھول گیا ہو تو پتا بتلا دوں؟

کبھی فتراک میں تیرے کوئی نخچیر بھی تھا

قید میں ہے ترے وحشی کو وہی زلف کی یاد

ہاں! کچھ اک رنجِ گرانباریِ زنجیر بھی تھا

بجلی اک کوند گئی آنکھوں کے آگے تو کیا!

بات کرتے، کہ میں لب تشنۂ تقریر بھی تھا

یوسف اس کو کہوں اور کچھ نہ کہے، خیر ہوئی

گر بگڑ بیٹھے تو میں لائقِ تعزیر بھی تھا

دیکھ کر غیر کو ہو کیوں نہ کلیجا ٹھنڈا

نالہ کرتا تھا، ولے طالبِ تاثیر بھی تھا

پیشے میں عیب نہیں، رکھیے نہ فرہاد کو نام

ہم ہی آشفتہ سروں میں وہ جواں میر بھی تھا

ہم تھے مرنے کو کھڑے، پاس نہ آیا، نہ سہی

آخر اُس شوخ کے ترکش میں کوئی تیر بھی تھا

پکڑے جاتے ہیں فرشتوں کے لکھے پر ناحق

آدمی کوئی ہمارا دمِ تحریر بھی تھا؟

ریختے کے تمہیں استاد نہیں ہو غالبؔ

کہتے ہیں اگلے زمانے میں کوئی میر بھی تھا

شاعر: مرزا غالب

Hui Takheer To Kuch Baais  e  Takheer  Bhi Tha

Aap Aatay Thay Magar Koi Anaa Geer Bhi Tha

Tum Say Bejaa hay Mujhay apni Tabaahi Ka Gila

Iss Men Kuch Shaaibaa  e  Khoobi  e  Taqdeer Bhi Tha

Tu Mujhay Bhool Gia Ho To Pata Batla Dun

Kabhi Fitraak Men Teray Koi Nakhcheer Bhi Tha

Qiad Men Hay Teray Wehshi Ko Wahi Zulf Ki yaad 

haan Kuch Ik ranj  e  Giraanbaaari  e  Zanjeer Bhi Tha

Bijli Ik Koond Gai Aankhon  K Aagay To Kya

Baat kartay Keh Main Lab Tashna   e  Taqreer Bhi Tha

YOUSAF Uss Ko kahun Aor Kuch Na Kahay   Khiar Hui

Gar Bigarr Baithay To Main Laaiq  e  Tazeer Bhi Tha

Dekh Kar Ghair Ko , Ho Kiun Na Kalaija Thanda

Naala Karta Tha Walay Taalib  e  Taseer Bhi Tha

Peshay Men Aib Nahen , rakhiay Na Farhaad Ko Naam

Ham Hi Aashuft Saron Men Wo  Jawaanmeer Bhi Tha

Ham Thay marnay Ko Kharray , Paas Na Aaya, Na Sahi

Aakhir Uss Shokh K Tarkash Men Koi Teer Bhi Tha

Pakrray Jaatay Hen farishton k Likhay par Na Haq

Daadmi  Koi Hamaara Dam  e  Tehreer Bhi Tha

raikhtay k Tumhen Ustaad Nahen Ho GHALIB

Kehtay Hen Keh Aglay Zamaanay Men Koi  MEER Bhi Tha

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -