تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا

تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا
تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا

  

تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا

اوروں پہ ہے وہ ظلم کہ مجھ پر نہ ہوا تھا

چھوڑا مہِ نخشب کی طرح دستِ قضا نے

خورشید ہنوز اس کے برابر نہ ہوا تھا

توفیق بہ اندازۂ ہمت ہے ازل سے

آنکھوں میں ہے وہ قطرہ کہ گوہر نہ ہوا تھا

جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِ یار کا عالم

میں معتقدِ فتنۂ محشر نہ ہوا تھا

میں سادہ دل، آزردگیِ یار سے خوش ہوں

یعنی سبقِ شوقِ مکرّر نہ ہوا تھا

دریائے معاصی ُتنک آبی سے ہوا خشک

میرا سرِ دامن بھی ابھی تر نہ ہوا تھا

جاری تھی اسدؔ! داغِ جگر سے مِرےتحصیل

آ تشکدہ جاگیرِ سَمَندر نہ ہوا تھا

شاعر: مرزا غالب

Tu Dost Kisi Ka Bh i Sitamgar Na HuaTha

Aoron Pe Hay Zulm Keh Mujh Par Na Hua  Tha

Chorra Mah e   Nakhshab Ki Tarah Dast  e  Qaza Nay

Khursheed Hunooz Iss K baraabar Na Hua Tha

Tofeeq ba andaaza  e  Himmat  Hay Azal Say

Aankhon Men Hay Wo Qatra Keh Gohar Na Hua Tha

jab tak N aDekha Tha Qad  e  Yaar k Aalma 

Main Motaqid Fitana   e  Mesharr Na Hua Tha

Main Saada Dil , Aaazurdag  e  Yaar Say Khush Hun

Yaani Sabaq  e  Soq Mukarar Na Hua Tha

Daryaa  e  Maasi Tang Aabi Say Hua Khushk 

Mera Sar  e  Daaman Bhi Abhi  Tar Na Hua Tha

Jaari Thi ASAD Daagh  e  Jigar Say Tesil

Aatash Kada, Jageer  e  Samandar N a Hua Tha

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -