جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا

جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا
جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا

  

جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا

کہتے ہیں ہم تجھ کو منہ دکھلائیں کیا

رات دن گردش میں ہیں سات آسماں

ہو رہے گا کچھ نہ کچھ گھبرائیں کیا

لاگ ہو تو اس کو ہم سمجھیں لگاؤ

جب نہ ہو کچھ بھی تو دھوکا کھائیں کیا

ہو لیے کیوں نامہ بر کے ساتھ ساتھ

یا رب اپنے خط کو ہم پہنچائیں کیا

موجِ خوں سر سے گزر ہی کیوں نہ جائے

آستانِ یار سے اٹھ جائیں کیا

عمر بھر دیکھا کیے مرنے کی راہ

مر گئے پر دیکھیے دکھلائیں کیا

پوچھتے ہیں وہ کہ غالب کون ہے

کوئی بتلاؤ کہ ہم بتلائیں کیا

شاعر:مرزا غالب

Jaor Say Baaz Aaey , Par Baaz Aaen Kia

Kehtay Hen , Ham  Tujh  Ko Munh  Diklaaen  Kia

Raat Din Gardish Men Hen Saat Aasmaan

Ho Rahay Ga Kuch Na Kuch Ghabraaen Kia

Laag Ho To Uss Ko Ham Samjhen Lagaao

Jab Na Ho Kuch Bhi To Dhoka Khaen Kia

Ho Liay Kun Naama Bar K Saath Saath

Yaa RAB Apnay Khat Ko Ham Pahunchaaen Kia

Maoj e  Khoon Sar Say Guzar Hi Kiun Na Jaaey

Aastaan  e  Yaar Say Uth Jaaen Kia

Umr Bhar Dekha Kiay Marnay Kia Raah

Mar  Gaey Pr Daikiay , Dikhaaalen Kia

Poochtay Hen WoKeh GHALIB Kon Hay

Koi Batlaao Keh Ham Batlaeen Kia

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -