عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا
عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

  

عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا

تجھ سے، قسمت میں مری، صورتِ قفلِ ابجد

تھا لکھا بات کے بنتے ہی جدا ہو جانا

دل ہوا کشمکشِ چارۂ زحمت میں تمام

مِٹ گیا گھِسنے میں اُس عُقدے کا وا ہو جانا

اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم اللہ اللہ

اس قدر دشمنِ اربابِ وفا ہو جانا

ضعف سے گریہ مبدّل بہ دمِ سرد ہوا

باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا

دِل سے مِٹنا تری انگشتِ حنائی کا خیال

ہو گیا گوشت سے ناخن کا جُدا ہو جانا

ہے مجھے ابرِ بہاری کا برس کر کھُلنا

روتے روتے غمِ فُرقت میں فنا ہو جانا

گر نہیں نکہتِ گل کو ترے کوچے کی ہوس

کیوں ہے گردِ رہِ جَولانِ صبا ہو جانا

تاکہ تجھ پر کھُلے اعجازِ ہوائے صَیقل

دیکھ برسات میں سبز آئنے کا ہو جانا

بخشے ہے جلوۂ گل، ذوقِ تماشا غالبؔ

چشم کو چاہیے ہر رنگ میں وا ہو جانا 

شاعر: مرزا غالب

Ishrat  e  Qatra hay Darya Men Fana Ho Jaana

dard  Ka Had Say Guzarna Hay Dawa  Ho Jaana

Tujh Say Qismat Men Miri Surat  e  Qufl   e  Abjad

Tha Likh Baat K Bantay Hi Judaa Ho Jaana

Dil Hua kamakash  e  Chaara  e  Zehmat  Men Tamaaam

Mitt Gia ghisnay Men Iss Uqday K aWaa Ho Jaana

Ab Jafa Say Bhi Hen Mehroom Ham ALLAH ALLAH

Iss Qadar Dushman  e  Arbaab  e  Fana Ho Jaana

Zuf ay Girya Mubadill Ba Dam Sard Hua

Baawar Aaya Hamen PaanI KaWaa Ho Jaana

Dil Say Mitna Tiri Ingasht  e  Hinaai K aKhayaal 

Ho Gia Gosht Say Naakhun Ka Juda Hi Jaana

Hay MujhaY abr  e  Bahaari Ka Baras Kar Khulna

Rotay rotay Gham  e  Furkat Men fana Ho Jaana

Gar Nahen Nikahat  e  Gull Ko Tiray Koochay Ki Hawas

Kiun Hay gard rah  e  Julaan  e  Saba Ho Jaana

Bakhshay Hay jalwa  e  Gull,Zoq  e  Tamaasha GHALIB

Chashm Ko Chaahiay Har rang Men Waa Ho Jaana

Taa Keh Tujh Par Khulay Ejaaz  e  Hawaa  e  Saiqal

Dekh Barsaat Men Sabz Aainay Ka Ho Jaana

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -