آمد خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست

آمد خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست
آمد خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست

  

آمد خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست

دودِ شمعِ کشتہ تھا شاید خط ِرخسارِ دوست

اے دلِ ناعاقبت اندیش ضبطِ شوق کر

کون لا سکتا ہے تابِ جلوۂ رُخسارِ  دوست

خانہ ویراں سازیِ حیرت، تماشا کیجیے

صورتِ نقشِ قدم ہوں رفتۂ رفتارِ دوست

عشق میں بیدادِ رشک غیر نے مارا مجھے

کشتۂ دشمن ہوں آخر، گرچہ تھا بیمارِ دوست

چشم ما روشن کہ اس بے درد کا دل شاد ہے

دیدۂ پرخوں ہمارا، ساغر سرشارِدوست

غیر یوں کرتا ہے میری پرسش اس کے ہجر میں

بے تکلف دوست ہو جیسے کوئی غم خوارِد وست

تاکہ میں جانوں کہ ہے اس کی رسائی واں تلک

مجھ کو دیتا ہے پیامِ وعدۂ دیدارِ دوست

جب کہ میں کرتا ہوں اپنا شکوۂ ضعفِ دماغ

سر کرے ہے وہ حدیثِ زلف عنبر بارِ دوست

چپکے چپکے مجھ کو روتے دیکھ پاتا ہے اگر

ہنس کے کرتا ہے بیانِ شوخیِ گفتارِ دوست

مہربانی ہائے دشمن کی شکایت کیجیے

تا بیاں کیجے سپاسِ لذتِ آزارِ دوست

یہ غزل اپنی مجھے جی سے پسند آتی ہے آپ

ہے ردیف شعر میں غالبؔ ز بس تکرار دوست

شاعر: مرزا غالب

Aamad e Khat Say Hua hay Sard Jo Bazaar e Dost

Dood e Shama e Gushta Tha, Shayad Khat e Rukhssar Dost

Ay Dil e Na Aaqbat Andesh Zabt e Shoq Kar

Kon  La Sakta Hay Taab e Jalwa e Rukhsaar e Dost

Khaana Veraan Saazi e Hairat Sazi e Hirat, Tamaasha Kijiay

Soorat e naqsh e Qadam Hun Rafta e Raftaar e Dost

Eshq Men Bedaad e Rshq Ghair nay Maara Mujhay

Kushta e Dushman HunAAkhir garcheh Tha Beemaar e Dost

Chamshm e Maa Roshan Keh Uss Bedaad Ka Dil Shaad Hay

Deeda e Pur Khoon Hamaara , Saaghar e Sarshaar e Dost

Ghair, Yun Karta Hay Meri Pursish Uss K Hijr Men

Be Takalluf Dost Ho Jaisay Koi Gham Khaar e  e Dost

Taa keh Main Jaanu Keh Hay Uss Ki RasaaiWaan Talak

Mujh Ko Deta Hay Piyaam e Waada e Dedaar e Dost

 Jab Keh Main Karta Hun Apna Shikwa e Zoaf e Dimaagh

Sar Karay Hay Hadees e Zulf e Anbar e Yaar e Dost

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -