نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ

نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ
نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ

  

نفَس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ

اگر شراب نہیں انتظارِ ساغر کھینچ

"کمالِ گرمیِ سعیِ تلاشِ دید نہ پوچھ

بہ رنگِ خار مرے آئینہ سے جوہر کھینچ

تجھے بہانۂ راحت ہے انتظار اے دل

کیا ہے کس نے اشارہ کہ نازِ بسترکھینچ

تری طرف ہے بہ حسرت نظارۂ نرگس

بہ کوریِ دلِ و چشمِ رقیب، ساغر کھینچ

بہ نیم غمزہ ادا کر حقِ ودیعتِ ناز

نیامِ پردۂ زخمِ جگر سے خنجر کھینچ

مرے قدح میں ہے صہباۓ آتشِ پنہاں

بروۓ سفرہ کبابِ دلِ سمندر کھینچ

شاعر:مرزا غالب

Nafass Na Anjuman e Aarzu Say Baahar Khaich

Agar Sharaab Nahen , Intezaar e Saghar Khaich

Kamaal e garmi e Sai e Talaashe Deed Na Pooch

Bas Rang e Khaar Miray Aainay Say Johar Khaich

Tujhay Bahaanaa e Raahat Hay Intzaar Ay Dil

Kia Hay Kiss Nay Ishaara Keh naaz e Bistar Khula

Tiri taraf Hay , Ba Hasrat , Nazaara e Nargiss 

ba Kori Dile Chashm e Raqeeb , Saghar Khaich

Ba Neem e Ghamza Ada kar Haq e Wadyat  e Naz

Nayaam e Parda e Zakhme Jigar Khaich

Miray Qdaah Men Hay Sehba e Aatish Pinhaan

Ba Roo  e Sufra Kabaab Dil Samnadar Khaich

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -