حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد

حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد

  

حسن غمزے کی کشاکش سے چھٹا میرے بعد

بارے آرام سے ہیں اہلِ جفا میرے بعد

منصبِ شیفتگی کے کوئی قابل نہ رہا

ہوئی معزولیِ انداز و ادا میرے بعد

شمع بجھتی ہے تو اس میں سے دھواں اٹھتا ہے

شعلۂ عشق سیہ پوش ہوا میرے بعد

خوں ہے دل خاک میں احوالِ بتاں پر، یعنی

ان کے ناخن ہوئے محتاجِ حنا میرے بعد

درخورِ عرض نہیں جوہرِ بیداد کو جا

نگہِ ناز ہے سرمے سے خفا میرے بعد

ہے جنوں اہلِ جنوں کے لیے آغوشِ وداع

چاک ہوتا ہے گریباں سے جدا میرے بعد

کون ہوتا ہے حریفِ مئے مرد افگنِ عشق

ہے مکرّر لبِ ساقی میں  صلا میرے بعد

غم سے مرتا ہوں کہ اتنا نہیں دنیا میں کوئی

کہ کرے تعزیتِ مہر و وفا میرے بعد

آئے ہے بے کسیِ عشق پہ رونا غالبؔ

کس کے گھر جائے گا سیلابِ بلا میرے بعد

شاعر: مرزا غالب

Huns Ghamzay Ki Kashakash Say Chhutta Meray baad

Baaray, Aaaram Say Hen Ehl e Wafa Jafa Meray baad

Mansab e  Sahiftagi K Koi Qaabil Na Raha

Hui maazooli  e Andaaz o Ada Meray baad

Shama Bujhti hay To Uss Men Dhuan Uthat aHay

Shula e Eshq Sia Posh Hua Meray baad

Khoon Hay Khaak Men Ahwaal e Butaan par Yaani

Un K Naakhun Huay Mohtaaj e Hina Meray baad

dar Khor e Arz e nahen Johar  e Bedaad Ko Ja

Nigah Naaz Hay Surmay Say Khafa Meray Baad

Hay Junoon Ehl e Junoon k Liay Aghosh e Vidaa

Chaak Hota Hay Giraibaan Say Juda Meray Baad

Kon Hota Hay Hareef e May Mard Afgan  e  Eshq 

Hay Mukarar Lab e  Saaqi Pe Salaa Meray Baad

Gham Say Marta Hun Keh Itna Nahen D unya Men Koi

Keh Karay Tazeer e Mehr o Wafa Meray baad

Aaey Hay Bekasi e Eshq Pe Rona GHALIB

Kiss K Ghar Jaaey Ga Selaab e Balaa Meray Baad

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -