منشیات میں اضافہ برآمدکندگان کی ’موت‘ کاپیغام

منشیات میں اضافہ برآمدکندگان کی ’موت‘ کاپیغام
منشیات میں اضافہ برآمدکندگان کی ’موت‘ کاپیغام

  


کراچی ( مانیٹرنگ ڈیسک)مس ڈیکلریشن اور جعلی فارم ”ای“ کے ذریعے برآمدی کنسائنمنٹس میں منشیات کی سمگلنگ بڑھنے سے یورپ وامریکہ سمیت دنیا کے دیگر تمام ممالک میں سیکڑوں برآمدکنندگان کے بلیک لسٹ ہونے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے ۔ یہ بات ڈائریکٹر جنرل ریجنل ڈائریکٹریٹ اینٹی نارکوٹکس فورس بریگیڈیئر ابوزر نے پاکستان ہوزری مینوفیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن (پی ایچ ایم اے) میں ویلیوایڈڈ ٹیکسٹائل ایسوسی ایشنز کے نمائندوں اور برآمدکنندگان کے اجلاس سے خطاب کے دوران کہی۔بریگیڈئرابوزر نے کہا کہ اے این ایف مجموعی سالانہ برآمدات میں سے محض 2.2 فیصدکا اطلاع ملنے پر معائنہ کرتی ہے۔انہوں نے برآمدکنندگان سے کہا کہ وہ اس ضمن میں محتاط رہیں کیونکہ سمگلر ان کے پورے نچلے عملے کو خریدکر برآمدی کارگو کے ذریعے منشیات اسمگل کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں، برآمدکنندگان کو اپنا اصلی فارم ”ای“ فروخت نہیں کرنا چاہیے جبکہ پورٹ آپریٹرز کی جانب سے ون ونڈو سروس بھی مہیا نہیں کی جانی چاہیے۔۔

مزید : بزنس