شاہدرہ:حساس ادارے کے سابق ملازم کا قتل جائیداد کا شاخسانہ نکلا

شاہدرہ:حساس ادارے کے سابق ملازم کا قتل جائیداد کا شاخسانہ نکلا
 شاہدرہ:حساس ادارے کے سابق ملازم کا قتل جائیداد کا شاخسانہ نکلا

  

 لاہور(ملک خیام رفیق) تھانہ شاہدرہ کے علاقہ کامران پارک میں حساس ادارے کے سابق ملازم کے قتل کاسبب جائیداد کا تنازع نکلا، مقتول نے واردات سے آدھا گھنٹہ قبل اپنے وکیل کو جان کو لاحق خطرا ت سے آگاہ کیا تھا۔مقتول کے بھانجوں اور اہل محلہ کے مطابق مقتول محمد عارف انتہائی شریف انسان تھااوراڑھائی کروڑ مالیت کی جائیداد کے ایک تنازع میں بطور ثالث کردار ادا کر رہا تھا۔ روزنامہ ’’پاکستان‘‘سے گفتگو کر تے ہوئے انہوں نے کہا کہ مقتول پر جائیداد کے تنازع میں ایک پارٹی کی طرف سے مسلسل دباؤ ڈالا جارہا تھا ۔ یہ پارٹی اپنے حق میں فیصلہ چاہتی تھی جس کے لئے مقتول رضامندنہیں تھا جس پر اسے مسلسل قتل کی دھمکیاں دی جارہی تھیں ۔ عارف نے قتل سے قبل اپنے وکیل کو جان کو درپیش خطرات سے آگاہ کرکے متوقع قاتلوں کے نام بھی بتائے تھے۔اس بارے میں انچارج انویسٹی گیشن اسرار کا کہناتھا کہ مدعی اور وکیل کی طرف سے کسی قسم کی کو ئی بات نہیں کہی گئی البتہ ایس ایچ او شاہدرہ کاکہنا تھا کے وکیل نے صرف اتنا بتایا ہے کہ عارف نے قتل سے چند لمحے قبل اس کو ان لو گوں کے نام بتائے تھے لیکن اس بارے میں ابھی پو لیس کو تفصیل نہیں بتائی گئی۔جب پولیس موقع پر پہنچی تو مقتول کے بہن بھائی ایک دوسرے پر بھی عارف کے قتل کا الزام لگا کر لڑ رہے تھے تاہم ابھی تفتیش جاری ہے۔

مزید : علاقائی