ایران کا وفادار سپاہی ہونے پر فخر ہے، عراقی شیعہ ملیشیا

ایران کا وفادار سپاہی ہونے پر فخر ہے، عراقی شیعہ ملیشیا

بغداد(این این آئی)عراق میں قائم شیعہ ملیشیا الحشد الشعبی کے سربراہ ابو مہدی المہندس ایران کے ساتھ اپنی اٹوٹ وفاداری کا اعلان کرتے ہوئے ایران کے متنازع جنرل قاسم سلیمانی کے ساتھ کام پر فخر کا اظہار کیا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایک انٹرویو میں الحشد الشعبی کے سربراہ ابو مہدی مہندس نے خود کو عالمی دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل ایرانی پاسداران انقلاب کی بیرون ملک سرگرم فیلق القدس کے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کا وفادار سپاہی قرار دیا۔ المہندس نے ’جہاد‘ کو اپنے لیے تفریح قرار دیا اور کہا کہ اس کا جہاد سابق عراقی نظام کے خلاف شروع ہوا۔ عراق کے خلاف بیرونی جارحیت، کویت اور عراق کی جنگ اور ایران مخالف مجاھدین خلق گروپ کے خلاف لڑائی میں بھی وہ پیش پیش رہا ہے۔المہندس سے پوچھا گیا کہ امریکا نے آپ کو دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کرتے ہوئے بلیک لسٹ کردیا ہے۔ اس پر آپ کی کیا رائے ہے۔ اس الحشد الشعبی کے سربراہ کا کہنا تھاکہ ’اسے اس بات پر فخر ہے۔ میں خواہش ہے کہ مرنے کے بعد مجھے عراق کے بجائے ایران کے شہداء قبرستان میں دفن کیا جائے۔ایک سوال کے جواب میں ابو مہدی نے کہا کہ اس نے فارسی زبان سیکھی کیونکہ یہ انقلاب کی زبان ہے۔ جب کہ عربی زبان قرآن کی زبان ہے۔

آیت اللہ بہشتی اس کے روحانی استاد ہیں جو انقلاب ایران کے ایک اہم لیڈر تھے۔

 

مزید : عالمی منظر