البغدادی 17 بمبار وں کی مد د سے موصل سے فرارہونے میں کامیاب

البغدادی 17 بمبار وں کی مد د سے موصل سے فرارہونے میں کامیاب

لندن(این این آئی)برطانوی ذرائع ابلاغ نیانکشاف کیا ہے کہ شدت پسند گروپ ’داعش‘ نے تنظیم کے سربراہ ابو بکر البغدادی کو موصل سے بہ حفاظت باہر نکالنے کے لیے بارود سے بھری 17 کاروں کے ذریعے دھماکے کئے گئے ۔برطانوی اخبار نے رپورٹ میں کہا کہ داعش نے دو ماہ قبل ایک منظم منصوبہ بندی کے تحت البغدادی کو عراق فوج کی پہنچ سے دور کردیا ۔ داعشی جنگجوؤں نے البغدادی کو موصل سے باہر نکالنے اور اسے کسی خفیہ مقام تک پہنچانے کے لیے بارود سے بھری 17 کاروں کے ذریعے حملے کیے تھے۔برطانوی اخبار کے مطابق جب داعش نے بارود سے بھری 17 کاروں کے ذریعے دھماکے کئے تو اس کے نتیجے میں مغربی موصل کی بند سڑک کو کھولنے کی راہ ہموار ہوگئی جس کے بعد البغدادی کو کسی محفوظ مقام پر منتقل کیا گیا تھا۔رپورٹ میں کہا گیا کہ دو ماہ قبل ایک روز جب اچانک داعش نے موصل کا محاصرہ توڑنے کی کامیاب کوشش کی اور چند گھنٹوں تک محاصرہ توڑنے میں کامیاب رہے تھے اس وقت ابو بکر بغدادی کو وہاں سے کسی دوسرے مقام پر منتقل کردیا گیا تھا۔برطانوی اخبار نے کرد عہدیدار فواد حسین کے حوالے سے بتایا کہ داعش نے مغربی موصل کی بند شہراہ کھولنے اور عراقی فوج کو پیچھے ہٹانے کے لیے یکے بعد دیگرے 17 کار بم دھماکے کیے تھے۔

ان دھماکوں سے خود داعش کو بھی غیر معمولی جانی نقصان پہنچا تھا مگر وہ البغدادی کو وہاں سے باہر نکالنے میں کامیاب رہے تھے۔

اخبار کے مطابق البغدادی کو مشرقی موصل سے فرار کرایا گیا تھا۔ اس کے بعد ان کے اصل ٹھکانے کا علم نہیں۔ عین ممکن ہے وہ مغربی موصل میں ہوں۔ کیونکہ دو ماہ قبل فرار کے بعد ممکنہ طور پر اس کا اگلا ٹھکانہ مغربی موصل ہی ہوسکتا ہے، انیس فروری سے مغربی موصل میں بھی داعش کے خلاف عراقی فوج کی جنگ جاری رہے۔فواد حسین نے بتایا کہ داعش نے اپنے 300 جنگجوؤں کو شام سے منگوایا جنہوں نے موصل کے مغرب کی سمت سے ملانے والی شاہراہ کا محاصرہ توڑا۔ اس وقت اس شاہراہ پر عراقی شیعہ الحشد الشعبی کا کنٹرول تھا۔ داعشی جنگجو مغربی شاہراہ کا محاصرہ توڑنے کے بعد البغدادی کو فرار کرانے میں کامیاب ہوگئے تھے۔

مزید : عالمی منظر