لندن، حلالہ کے نام پر مطلقہ مسلمان خواتین سے ہزاروں پاؤنڈ وصول کئے جانے انکشاف

لندن، حلالہ کے نام پر مطلقہ مسلمان خواتین سے ہزاروں پاؤنڈ وصول کئے جانے ...

لندن(اے این این) برطانیہ میں حلالہ کا آن لائن بزنس، متعدد اداروں کی جانب سے مطلقہ مسلمان خواتین سے ہزاروں پاؤنڈ وصول کئے جانے کا انکشاف ہواہے جبکہ مشرقی لندن میں اسلامی شریعہ کونسل نے حلالہ کو پیسہ کمانے کا ذریعہ اور مجبور خواتین کا استحصال قرار دیا ہے۔برطانوی نشریاتی ادارے کی تحقیقی رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں انٹرنیٹ پر متعدد ادارے مطلقہ مسلم خواتین سے حلالہ کے نام پر ہزاروں پاؤنڈ وصول کر رہے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق خواتین ایک اجنبی سے نکاح کے بعد اسے طلاق دے کر واپس اپنے پہلے شوہر سے شادی کرنے کیلئے رقم ادا کر رہی ہیں۔ایک خاتون فرح (فرضی نام) کے مطابق جب وہ 20 سال کی تھیں تو خاندانی دوستوں کے ذریعے ان کی شادی ہوئی دونوں کے بچے بھی ہوئے لیکن بعد میں ان کے ساتھ بدسلوکی شروع ہوئی۔ فرح نے کہا کہ ان کے شوہر انہیں بالوں سے بال پکڑ کر گھسیٹتے ہوئے گھر سے باہر نکالنے کی کوشش کر رہے تھے کئی مواقع پر پاگلوں کی طرح برتاؤ کرنے لگتے۔ ایک شدید بحث کے بعد انھوں نے مجھے ایک ٹیکسٹ میسج بھیجا۔طلاق، طلاق، طلاق۔ زیادہ تر مسلم ممالک میں تین طلاق پر پابندی ہے تاہم برطانیہ میں یہ جاننا تقریباً ناممکن ہے کہ کتنی خواتین کو تین طلاق کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ برطانوی ادار ے کے مطابق تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ بہت سی آن لائن سروسز کے ذریعہ حلالہ کو انجام دیا جا رہا ہے اور بہت سے معاملات میں خواتین سے عارضی شادی کے لیے ہزاروں پاؤنڈ وصول کیے جا رہے ہیں۔ فیس بک پر ایک آدمی نے حلالہ سروس کی تشہیر کی تھی۔ اس سے برطانوی ادارے کی رپورٹرنے اس سے ایک مطلقہ مسلم خاتون کے طور پر ملاقات کی تو اس شخص نے کہا کہ ڈھائی ہزار پاؤنڈ کے عوض وہ اس سے شادی کر سکتا ہے اور پھر طلاق دے دے گا تاکہ وہ اپنے پہلے خاوند سے دوبارہ شادی کر سکے۔ انھوں نے بتایا کہ ان میں سے ایک نے تو ایک خاتون سے شادی کرنے کے بعد اسے طلاق دینے سے انکار کر دیا تھا۔ دوسری جانب مشرقی لندن میں اسلامی شریعہ کونسل جو خواتین کو طلاق کے مسئلے پر مشورے دیتی ہے وہ سختی کے ساتھ حلالہ کی مخالف ہے۔ تنظیم کی خولہ حسن نے کہا کہ یہ جھوٹی شادی ہے۔یہ پیسہ کمانے کا ذریعہ ہے اور مجبور خواتین کا استحصال ہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ مکمل طور پر حرام ہے۔ اس کے لیے اس سے سخت لفظ استعمال نہیں کیا جا سکتا۔ اس کے دوسرے طریقے ہیں، مشاورت ہے۔ ہم لوگ ایسا کرنے کی کسی کو اجازت نہیں دیں گے۔ چاہے جو بھی ہو لیکن آپ کو حلالہ کی ضرورت نہیں۔

مزید : صفحہ آخر