اداروں سے تصادم تحریک انصاف کا پرانا وطیرہ ہے،برجیس طاہر

اداروں سے تصادم تحریک انصاف کا پرانا وطیرہ ہے،برجیس طاہر

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)وفاقی وزیر برائے اُمور کشمیر و گلگت بلتستان چوہدری محمدبرجیس طاہر نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ اداروں سے تصادم تحریک انصاف اور اُن کے رہنماؤوں کا پرانا وطیرہ ہے جس میں اُن کے قائد عمران خان خصوصی مہارت رکھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ عمران خان الزام تراشی اور اداروں کی تضحیک میں تمام حد یں پار کر چکے ہیں اور اُن کا یہ ریکارڈ ہے کہ وہ بغیر سوچے سمجھے بولتے ہیں جس کی وجہ سے پڑھ لکھا آج طبقہ اُن کی جماعت سے کنارہ کش ہو چکا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ افسو س اس امر کا ہے ان کے نزدیک انصاف صرف وہ ہی ہے جس کا فیصلہ ان کے حق میں کیا جائے اور جب کسی کیس کا فیصلہ ان کے خلاف آتا ہے تو وہ اس کو ماننے سے صاف انکار کر دیتے ہیں اور قومی اداروں پر الزام تراشی اور اُن کے دائرہ کار کو چیلنج کرنا شروع کر دیتے ہیں۔وفاقی وزیر نے کہا کہ تمام سیاسی جماعتیں 2018 کے الیکشن کی تیاریاں کر رہی ہیں جبکہ تحریک انصاف نے اپنی پارٹی کے اندر الیکشن تک نہیں کروائے ہیں جس پر الیکشن کمیشن آف پاکستان نے اُن کو ا بلے کے انتخابی نشان پر الیکشن لڑنے سے روک دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کو الیکشن کمیشن کے قواعد وضوابط کی پابندی کرتے ہوئے قانون کی مکمل پاسداری کرنی چائیے لیکن اس کے برعکس 2018 ء میں اپنی پیش آمدہ بدترین شکست پر پردہ پوشی کے لیے محاز آرائی کی سیاست کا سہارا لے رہے ہیں جو کسی بھی صورت جمہوری انداز نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کے نزدیک اداروں کی کوئی اہمیت نہیں ہے اوروہ صرف الزام تراشی اور منشورکی بنیاد پر آپ کو 2018 کے الیکشن میں کامیابی حاصل کرنا چاہتے ہیں جب کہ حقیقت اس کے برعکس ہے کیونکہ عوام نے ووٹ کا فیصلہ کارکردگی کی بنیاد پر کرنے کی ٹھان رکھی ہے جس میں مسلم لیگ(ن)کو واضح کامیابی حاصل ہو گی۔انہوں نے کہا کہ ابھی تک تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے رہنما 2013 ء کے الیکشن کی بدترین شکست کے خوف سے باہر نہیں آئے اور اب وہ الزام تراشی میں اس حد تک گر گئے ہیں کہ اب اُن کے رہنماؤں نے کھلے عام حساس اداروں کے سابق سربراہان پربھی غلط الزامات لگانے شروع کر دیے ہیں ۔ جس کی جتنی مذمت کی جائے وہ کم ہے۔چوہدری محمدبرجیس طاہر نے کہا کہ عمران خان اور اُن کی خیبر پختونخواہ کی حکومت کی کارکردگی صفر ہے اور یہ اپنی کامیابی کی اُمید یں پانامہ کیس کے فیصلے سے لگائے بیٹھے ہیں کہ شاید کہ اس کے فیصلہ آنے سے اُن کی مردہ سیاست کچھ زندہ ہو جائے، جس میں ماضی کی طرح اُن کو ایک بار پھر ندامت اور شرمندگی کا سامنا کرنا پڑے گا۔انہوں نے کہاکہ اب بھی وقت ہے کہ عمران خان اور اُن کے دیگر رہنما سازش اور الزامی تراشی کی سیاست سے باہر نکل کر عوام کی خدمت کو اپنا شعار بنا ئیں اور کامیابی کے لیے محمدنواز شریف کے وژن کی طرح صرف کارکردگی اورعوام کی خدمت کو اپنی بنیاد بنائیں۔

 

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر