حکومت شب برأت کے اجتماعات، تراویح پر پابندی نہ لگائے

حکومت شب برأت کے اجتماعات، تراویح پر پابندی نہ لگائے

  

لاہور (پ ر)تحریک لبیک یا رسول اللہ صلی اللہ علیک وسلم کے سربراہ ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی نے کہاکہ حکومت چند لبرل لوگوں کے مشورے پر شب برأت کے اجتماعات اور تراویح کی جماعت پر ہر گزپابندی نہ لگائے۔”کرونا“ وائرس جان کی بجائے ایمان کے لئے زیادہ خطرناک ہوتا نظر آ رہا ہے۔"کرونا"کی وجہ سے شعائر اسلام،عبادات کا نظام اور ہر خاص و عام خطرات کی زد میں ہیں۔اب تک کے لاک ڈاؤن سے ملک ایک سال پیچھے چلا گیا ہے۔ملک بھر میں جمعہ اور نماز پنجگانہ با جماعت پر پابندی سے رب کو ناراض کرنے کی پالیسی اپنائی گئی ہے۔محض مرض کے خدشے پر فرائض کے ترک اور شعائر اسلام پر پابندی کا ایجنڈا بہت نا روا ہے۔کاروبار اور روزگار کے مراکز کی بندش سے تنگ لوگوں کے لئے پروردگار کی مساجد کو لگے تالے کسی بہت بڑی محرومی سے کم نہیں۔

مدارس کے تعلیمی سلسلے کے تعطل، سالانہ امتحانات کے التواء، خصوصاً رمضان کی آمد سے قبل شعبہ حفظ کی تعطیلات سے حفاظ کرام کی گردان میں واقع ہونے والے خلل سے پیدا ہونے والے مذہبی طبقے کا اضطراب الفاظ میں بیان نہیں کیا جا سکتا۔حکومت فضلِ الٰہی کے دروازے اپنے اوپر خود بند کرنے کے ٹریک پہ چل رہی ہے۔" کرونا "وائرس کی آزمائش پر حال اتنا پتلا ہوتو دجال والی آزمائش پر ثابت قدمی کیسے اختیار کی جا سکے گی۔دریں اثنا ڈاکٹر محمد اشرف آصف جلالی نے مفتی محمد عابد جلالی امیر تحریک فکرِ رضا کے مرکز جیا بگا شریف پرپولیس کے چھاپے،چھوٹے چھوٹے بچوں کو ہراساں کرنے اور قاری محمد اسد سہیل کی گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا:مقامی بچوں کے تلاوتِ قرآن کے عمل پر طلباء اور اساتذہ کے ساتھ بد سلوکی سے لوگوں کے دینی جذبات مجروح ہوئے ہیں حکومت واقعہ میں ملوث پولیس اہلکاروں کو کٹہرے میں لائے۔قرآن کے فیضان سے بننے والے پاکستان میں شعائر اسلام پر کیوں حملے کیے جا رہے ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -