طالبعلم قتل‘ ورثا کا احتجاج‘ پولیس کیخلاف بھی نعرے بازی

  طالبعلم قتل‘ ورثا کا احتجاج‘ پولیس کیخلاف بھی نعرے بازی

  

ملتان(نیوز رپورٹر)تھانہ نواں شہر کے علاقے موضع گگڑاں قلندر جہانیاں کے مکینوں نے ملزمان مدثر عرف پپو، قمر عباس عرف قمری، محمد سلیم، ارم، اسلم، مشتاق سڈل، عمران(بقیہ نمبر22صفحہ6پر)

مزمل ودیگر ساتھیوں کے گرفتاری کے لئے لاش رکھ کر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا،مظاہرین میں محمد جعفر، مہدی حسین، محمد طیب، جاوید، سعید، ربنواز، خضر حیات، راشد علی، شکیل، محمد یوسف صادق ودیگر علاقہ معززین شریک تھے، مظاہرین نے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ گزشتہ شب ملزمان مدثر عرف پپو، ومر عباس عرف قمری اپنے دیگر ساتھیوں کی مدد سے مہدی حسین کے گھر پر دھاوا بول دیا اور اندھا دھند فائرنگ کرکے مہدی حسین کے بیٹے نویں کلاس کے طالبعلم مقتول ماجد علی کو گولیاں مارکر قتل کردیا لیکن ملزمان نے سیدھے فائر کرتے رہے اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دیتے ہوئے علاقہ معززین کے سامنے فرار ہوگئے، مظاہرین نے مزید بتایا کہ واقع کی اطلاع پر متعلقہ پولیس نے موقع پر پہنچ کر گولیوں کے دو درجن سے زائد خالی خول حراست میں لیکر پوسٹ مارٹم کے بعد ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرلیاہے،تھانہ نواں شہر کے اے ایس آئی مظہر نوناری ملزمان کی پشت پناہی کرتا جس کی وجہ علاقہ میں ڈکیتی و چوری، راہزنی کی وارداتوں کا سلسلہ عام ہے لیکن پولیس صرف کاغذی کارروائی کی حد تک ہی محدود ہے، مزید کہا کہ ملزمان کے خلاف پہلے بھی علاقہ مکینوں نے مال مویشی چوری کے متعدد مقدمات اندراج ہے لیکن پولیس ان کے خلاف کارروائی کرنے سے قاصر ہے مظاہرین نے اعلی حکام چیف جسٹس آف پاکستان، وزیر اعظم آف پاکستان، وزیر اعلی پنجاب، آئی جی پنجاب، آر پی او ملتان سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ مقتول ماجد علی کے قاتلوں کو گرفتار کرکے ان کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے ورنہ اڈا بند بوسن بلاک کرنے پر مجبور ہوجائے گے جن کی تمام تر ذمہ داری انتظامیہ کے اوپر عائد ہوگی۔

نعرے بازی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -