علامہ ظہیر شہید نے اسلام کے نفاذ کیلئے جام شہادت حاصل کی: مولانا عبد الرحمن سلفی

علامہ ظہیر شہید نے اسلام کے نفاذ کیلئے جام شہادت حاصل کی: مولانا عبد الرحمن ...

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)عالم اسلام کی عظیم شخصیت علامہ احسان الہی ظہیر شہید پر علماء اسکالر، صحافی، سیاسی رہنما وقانون داں کی ویڈیو کانفرنس میں گفتگو کرتے ہو ے امیرجماعت غربااہلحدیث پاکستان مولاناعبدالرحمن سلفی نے کہا علامہ شہید کی اسلامی نظام کے نفاذ کے لیے جدوجہد کو ہمیشہ یاد رکھا جاے گا انہوں نے قرآن وسنت کے لیے جام شہادحاصل سینیٹرپروفیسرساجدمیر نے کہا علامہ ظہیر نے ختم نبوت کے لیے اپنی زندگی وقف کررکھی تھی وہ ختم نبوت کے تحفظ کے لیے ہرطرح سے میدان عمل ہوتے ممتاز اسکالر علامہ شہید کے صاحبزادے حافظ ابتسام الہی ظہیرنے کہاکہ والدمحترم نے اسلامی نظام کے نفاذ کے لیے اپنے حصہ کاکام کرکے ہمیں راہ دی اب ہم نے انکے مشن کو مکمل کرنا ہے کہ پاکستان بنانے مقصد ایک فلاحی اسلامی مملکت کی تکمیل ہوجائے۔ کونسل علامہ ڈاکٹر عامر عبداللہ محمدی نے کہاعلامہ شہید چاہتے تھے کہ امت کو فرقہ بندی سے نکال کر امت محمد بنایاجائے اور وہ اسکے لیے کہتے تھے ہمارے پاس قرآن وسنت کی شکل میں اتحاد امت بہترین نسخہ ہے۔مولانا ضیااللہ شاہ بخاری نے کہا کہ علامہ احسان نے عالم اسلام کی عظیم مدینہ یونیورسٹی میں دوران تعلیم دنیامیں پہلی کتاب قادیانیت پر لکھ کر ایک عظیم کارنامہ انجام دیاتھاعلماء اہل عرب بھی اس وقت فتنہ قادیانیت سے واقف نہیں تھے۔ممتاز صحافی مجیب الرحمن شامی نے کہاوہ عظیم مبلغ داعی اسلام تھے انکی آوازآج بھی کانوں میں گونجتی ہے انکی شہادت سے بہت نقصان ہوا انکی شہادت کل کی سی بات لگتی ہے۔ شریعت کورٹ کے سابق جسٹس شفیع محمدی نے کہاعلامہ ظہیربلند پائے کے عالم دین ہونے کے ساتھ قانون کے بھی عالم تھے انہوں نے پوری زندگی قرآن وسنہ کے عملی نفاذ کے لیے جدو جہد کی۔عمران احمد سلفی نے کہا علامہ احسان الٰہی ظہیر شہید ایک عظیم بلند شخصیت کے مالک تھے اللہ تعالیٰ نے انہیں بیک وقت کئی خوبیوں سے نوازا تھا۔عالم، خطیب،صحافی،سیاستدان و قانون کے میدان میں قابل ذکر مقام حاصل تھا۔ علامہ عبدالقدیر خاموش نے کہا علامہ شہید سے رفاقت خون کے رشتے سے بھی زیادہ تھی ان کے ساتھ کام کرنے کا شرف حاصل رہا انکی جدائی آج بھی دکھی کردیتی ہے۔مولانا پروفیسر محمدسلفی نے کہا اللہ تعالی علامہ ظہیر کی قبر کو نورسے بھرے دین اسلام کے لیے انکی خدمات کو فراموش نہیں کیا جاسکتا وہ امام العصر عرب والعجم تھے انکا کوئی ثانی نہیں تھا۔علامہ زبیر احمد ظہیر نے کہا علامہ احسان الٰہی ظہیر رح جیسی شخصیات صدیوں میں پیدا ھوتے ھیں وہ تمام مکاتب فکر کے نزدیک علم کا سمندر تھے۔ علامہ زاہد ہاشمی الازہر نے کہا وہ دنیا میں کہیں بھی جاتے علما انکے گرد ھوتے علما میں بلند مقام حاصل تھا۔ حشمت اللہ صدیقی نے کہا علامہ شہید نے مختلف زبانوں میں کتابیں لکھیں،آپ کی کئی کتابیں عرب کی یونیورسٹیوں کے نصاب میں شامل ھیں انکی علمی خدمات لائق تحسین ہیں۔علامہ عبد الخالق آ فریدی نے کہا علامہ کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا وہ عظیم لیڈر تھے وہ عالمی حالات پر گہری نظر رکھتے تھے وہ استاداور روحانی والد تھے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -