بلوچستان کے غیور عوام نے پاکستان کیخلاف تمام سازشوں کو شکست دی :ممنون حسین

بلوچستان کے غیور عوام نے پاکستان کیخلاف تمام سازشوں کو شکست دی :ممنون حسین

کوئٹہ(این این آئی) صدر مملکت ممنون حسین نے کہاہے کہ پاکستان بالخصوص بلوچستان میں امن وامان کی صورتحال گزشتہ چند سالوں سے مسلسل بہتری کی طرف گامزن ہے جس کا سہراسیکورٹی فورسز اور تمام قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ ساتھ باشعور اور باہمت عوام کو بھی جاتا ہے بلوچستان کے غیور اور محب وطن عوام نے ثابت قدمی اور استقلال سے پاکستان کے خلاف تمام منفی پروپیگنڈوں اورسازشوں کو شکست دی اور آج پوری دنیا ہماری قوم کے دہشت گردی کے خلاف پختہ عزم اور بے مثال قربانیوں کی معترف ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کو فرسٹ بلوچستان اوپن محمد علی جناح شوٹنگ چیمپیئن شپ 2016ء کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ صدر مملکت نے کہا کہ ضرب عضب ایک آپریشن سے زیادہ ایک قومی عزم ، نظریہ اور طرز فکر و عمل بن چکاہے اور امن عامہ کی بحالی پاک چین اقتصادی راہداری کی تعمیر و تکمیل اور تعلیم و ترقی کے فروغ سے مستحکم اور خوشحال پاکستان ایک روشن حقیقت کے طور پر سامنے آرہا ہے اور اگلے سال جب قوم جشن آزادی منارہی ہوگی انشاء اللہ پاکستان آج سے کہیں زیادہ مضبوط روشن اور خوشحال ہوگا؂

، صدر مملکت ممنون حسین نے کہا کہ 1970ء تک ملک میں ترقی کی رفتار درست رہی اس کے بعد کرپشن اور بدعنوانی کا عنصر بڑھنے سے خرابیاں آتی گئیں اور کارکردگی متاثر ہونے لگی مختلف شعبے کرپشن اور بدعنوانی سے تباہ ہوئے بدعنوان عناصر کے خلاف ماضی میں معاشرتی رویے بھی ان کی حوصلہ شکنی کا باعث تھے اور بے ایمان لوگوں سے کنارہ کشی کی جاتی تھی موجودہ وقت فرض شناس ایماندار اور ایسے مخلص لوگوں کی حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے جو پاکستان کو اس منزل تک لے جاسکیں جس کا خواب قائد اور اقبال نے دیکھا تھا۔ ہم میں سے ہر فرد یہ پختہ تہیہ کرلے کہ ہمیں کرپشن کے خاتمے کیلئے اپنا حصہ ڈالنا ہے جس کا بہتر طریقہ یہی ہے کہ کرپٹ اور بدعنوان عناصر کو رائے راست پر لانے کیلئے بہتر طور پر قائل کریں بصورت دیگر ایسے عناصر سے معاشرتی بائیکاٹ کیا جائے آج ہر فرد نے مثبت رویہ اختیار نہ کیا تو ہم ترقی کے اہداف حاصل نہیں کرسکیں گے۔ صدر مملکت نے کہا کہ بلوچستان غیر معمولی توقعات کا مظہر و مسکن ہے۔ سی پیک معمولی منصوبہ نہیں بلکہ اس سنچری کا ملینیم ہوگا جسکا زیادہ فائدہ بلوچستان کو حاصل ہوگا۔ صدر ممنون حسین نے کہا کہ سی پیک سے متعلق گمراہ کن باتیں کرنے والوں کو اس قومی منصوبے سے متعلق احتیاط سے کام لینا چائیے۔ سی پیک منصوبے کے ابتدا ء میں چار پانچ آپشن موجود تھے تاہم حتمی طورپر یہ فیصلہ کیاگیاکہ پہلے سے موجودبنیادی ڈھانچے کواستعمال میں لاتے ہوئے اسے فعال کیاجائے اس فیصلے کے بعد کوئی تبدیلی نہیں ہوئی یقین دلاتاہوں کہ سی پیک منصوبے کے روٹ میں ایک انچ بھی تبدیلی نہیں کی گئی۔پاک چائنہ اقتصادی راہداری کی تکمیل سے پاکستان خطے کااہم ترین ملک بن جائیگااورپڑوسی ممالک افغانستان ،ایران اورہندوستان سمیت پورا مڈل ایسٹ اس منصوبے سے فائد ہ اٹھاسکے گا۔اس منصوبے کی اہمیت کاانداز ہ اس بات سے بخوبی لگایا جاسکتاہے کہ گزشتہ دوسالوں کے دوران سنٹرل اشیاء کے مختلف ممالک کے سربراہوں نے اپنے ملک کارابطہ ܳی پیک سے منسلک کرنے کی خواہش کااظہارکیا۔سی پیک میں نیوکلیئرسے توانائی کے حصول کے چار منصوبے بھی شامل ہیں جن میں دومکمل ہوچکے ہیں جبکہ دوجاری ہیں اس کے علاوہ بھی کوئلہ شمسی توانائی ودیگرذرائع سے بجلی کے حصول کے منصوبے شامل ہیں جنکی تکمیل سے 2018 ء تک لوڈشیڈنگ کایاتومکمل خاتمہ ہوجائیگا یاپھر معمولی نوعیت کی لوڈشیڈنگ رہ جائیگی۔

مزید : علاقائی


loading...