پاکستان سائنس اور ٹیکنالوجی کو کسی صورت نظرانداز نہیں کرسکتا،بلیغ الرحمن

پاکستان سائنس اور ٹیکنالوجی کو کسی صورت نظرانداز نہیں کرسکتا،بلیغ الرحمن

بہاولپور( بیورورپورٹ) سترہویں بین الاقوامی پیور میتھ میٹکس کانفرنس2016ء اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور، ہائر ایجوکیشن کمیشن اور پرنسٹن یونیورسٹی کے تعاون سے اسلام آباد میں شروع ہوگئی۔ اس کانفرنس کے دیگر معاون ادارے پاکستان میتھی میٹیکل سوسائٹی، ایڈوانسڈ انسٹی ٹیوٹ آف میتھی(بقیہ نمبر2صفحہ11پر )

میٹیکل سائنسز اور الجبرا فورم ہیں۔ اس سہ روزہ کانفرنس کا حقیقی خیال (تھیم) الجبرا، جیومیٹری اور تجزیہ ہے۔ اس کانفرنس میں 70 مقرراور 363شرکاء شامل ہیں جن میں اہم ترین 9 مقررین بھی ہیں جن میں اکثر ہمارے غیر ملکی مہمان ہیں جو قطر، تھائی لینڈ، تائیوان،انڈیا اور سعودی عرب سے تشریف لائے ہیں۔ محمد بلیغ الرحمن وزیر مملکت برائے تعلیم ، پروفیشنل ٹریننگ و کنٹرول برائے منشیات افتتاحی اجلاس کے مہمانِ خصوصی تھے۔ اس موقع پر پروفیسر ڈاکٹر قیصر مشتاق وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور و غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان ، پروفیسر ڈاکٹر عبدالباسط چانسلر پرنسٹن یونیورسٹی، پروفیسر ڈاکٹر رضا محمود بھٹی رکن ہائر ایجوکیشن کمیشن اور پروفیسرڈاکٹر سرور کامران نائب صدر پاکستان میتھی میٹیکل سوسائٹی بھی موجود تھے۔ محمد بلیغ الرحمن نے اپنے افتتاحی خطاب میں کہا کہ علم ریاضی دنیا بھر میں سائنسی علوم اور ٹیکنالوجی کی ترقی میں اہم کردار ادا کر تا رہاہے نیز ساری انسانیت اس سائنسی ترقی سے استفادہ کر رہی ہے۔ اس عہد، دور اور اس میدان میں پاکستان کو بھی آگے بڑھنا اور اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ پاکستان دنیا کے چند اہم ترین ممالک میں شامل ہے اور وہ کسی صورت میں بھی دنیا میں اپنی حیثیت ختم یا کم نہیں کرسکتا اور بطورِ خاص پاکستان سائنس اور ٹیکنالوجی کے میدان کو بھی کسی صورت نظر انداز نہیں کرسکتا۔پاکستان علم ریاضی کی ترقی میں اپنا حصہ اور کردار ادا کرتا رہے گا۔ انہوں نے یقین دلایا کہ وہ پاکستان میتھی میٹیکل سوسائٹی اور اس کے منتظمین کی حوصلہ افزائی کرنے کے علاوہ اس طرح کی خالصتاً علمی سرگرمیوں کی طرف حکومت کی توجہ مبذول کرائیں گے ۔ انہوں نے ملک بھر کے ریاضی دانوں پر زور دیا کہ وہ عالمی ریاضی دانوں سے مربوط رہیں اور اپنی تحقیقات کے دائروں کو مزید وسعت دیں۔ ہماری جامعات کو چاہیے کہ وہ اس طرح کی کانفرنسوں اور سیمیناروں کے ذریعے عالمی اداروں سے رابطے میں رہیں اور استفادے کے مواقع پیدا کرتے رہیں نیز انہیں پاکستان میں بلائیں تاکہ وہ بھی ہمارے اداروں کے سیمیناروں اور کانفرنسوں میں شرکت کریں۔محمد بلیغ الرحمن نے پروفیسر ڈاکٹر قیصر مشتاق اور اُن کی ٹیم کو شان دار الفاظ میں خراجِ تحسین پیش کیا جو پاکستان میں ریاضیاتی کلچر پیدا اور قائم کرنے کے لیے تسلسل کے ساتھ خدمات انجام دے رہی ہے۔اس سے پہلے پروفیسر ڈاکٹر قیصر مشتاق وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور اور صدرپاکستان میتھی میٹیکل سوسائٹی نے اپنے خطاب میں وزیر مملکت اور تمام شرکاء کو خوش آمدید کہا، پاکستان میتھی میٹیکل سوسائٹی کا تعارف پیش کیا اور سوسائٹی کا تاریخی پس منظر بھی بیان کیا نیز یہ بھی واضح کیا کہ سوسائٹی نے اب تک کی کانفرنسوں میں اور اس حوالے سے کیے گئے اقدامات کے ذریعے علمی دنیا بطورِ خاص ریاضی کی کیا خدمت کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان میتھ میٹیکل سوسائٹی 2000ء سے مسلسل کانفرنسیں منعقد کر رہی ہے جس میں بہت سے ملکی و غیر ملکی سکالر تشریف لائے اور انہوں نے اپنے اپنے مقالے پڑھے۔ انہوں نے بتایا کہ انٹرنیشنل پیور میتھ میٹکس کانفرنس پاکستان کی اوّلین واحد تنظیم ہے جو دنیا بھر کے ریاضی دانوں کو یہ موقع فراہم کرتی ہے کہ وہ ریاضی دان تشریف لائیں، ریسرچ پیپر پڑھیں، مکالمہ کریں، نئے نئے خیالات پیش کریں، خود بھی سیکھیں اور دوسروں کو بھی سکھائیں۔ پروفیسر ڈاکٹر قیصر مشتاق نے محمد بلیغ الرحمن وزیر مملکت کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے کانفرنس کے افتتاحی اجلاس کیلئے وقت نکالا ، ہمارا حوصلہ بڑھایا ، ہماری مدد کی اور شرکاء کو اپنے قیمتی خیالات سے مستفید کیا۔اس موقع پر پروفیسر ڈاکٹر عبدالباسط چانسلر پرنسٹن یونیورسٹی نے بھی خطاب کیا۔ افتتاحی اجلاس کے بعد بہت سے ٹیکنیکل سیشن ہوئے جن میں مقررین اور دیگر شرکاء نے ریاضی کے بہت سے میدانوں اوراُن میں کام کرنے کی طرف توجہ مبذول کرائی۔

بلیغ الرحمن

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...