مسابقتی کمیشن صارفین کے حقوق کیلئے کا م کر رہا ہے،اکرام الحق قریشی

مسابقتی کمیشن صارفین کے حقوق کیلئے کا م کر رہا ہے،اکرام الحق قریشی

کراچی(اسٹاف رپورٹر)مسابقتی کمیشن صارفین کے حقوق کے تحفظ کے لیے کا م کر رہا ہے کسی بھی گٹھ جوڑ اور تجارتی خلاف ورزیوں کی شکایت پر فوری کاروائی کی جاتی ہے۔ یہ بات ممبر مسابقتی کمیشن اکرام الحق قریشی نے کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کوکب اقبال سے اُنکے دورے اسلام آباد کے موقع پر اپنے دفتر میں بات کرتے ہوئے کہی اس موقع پر کیپ کے چیف کوآرڈینیٹر اسلام آباد سید فیضان علی بھی موجود تھے۔ ممبر مسابقتی کمیشن کے شعبہ کاروباری گٹھ جوڑ اور تجارتی خلاف ورزیاں نے کہا کہ مسابقتی قانون 2010کی شق83بالا دست کمپنیوں کی طرف سے مارکیٹ کی طاقت کے غلط استمعام سے روکتی ہے اور قانو ن کی شق 84تجارتی انجمنوں کی طرف سے کئے گئے ایسے فیصلوں اور کاروباری کمپنیوں کو ایسے تمام معاہدوں سے منع کرتی ہے جو کہ مارکیٹ میں مسابقت کی فضا کو سبوتاثرکرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شعبہ کاروباری گٹھ جوڑ اور تجاری خلاف ورزیاں (سی اینڈ ٹی 4) کو ان ممنوعات کو نافذ کرنے کا فرض سونپاگیا ہے ۔ اکرام الحق قریشی نے کہا کہ شعبہ کاروباری گٹھ جوڑ اور تجارتی خلاف ورزیاں خاص طورپر ملی بھگت اور گٹھ جوڑ میں ملوث ہونے کی تحقیق کرتا ہے اور کمیشن کو قانون شکنی کرنے والوں کے خلاف کاروائی کی سفارش کرتا ہے۔ کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کے چیئرمین کوکب اقبال نے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مختلف کمپنیاں گمراہ کن اور دھوکہ دہی پر مبنی تشہری طریقوں سے صارفین کو راغب کرتی ہیں جس سے صارفین کو معالی نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک کی کراچی شہر پر اجارہ داری قائم ہے اور وہ مختلف طریقوں خصوصاً بلوں میں بلاجواز اضافے سے صارفین کو لوٹ رہی ہے ۔ جب تک کراچی میں صرف ایک کمپنی کی اجارہ داری قائم رہے گی اس وقت تک صارفین کو انصاف میسر نہیں آسکتا ۔ انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک اور حکومت کے درمیان جو معاہدہ طے ہوا ہے ۔ اسکو دیکھا جائے اور کراچی کے مختلف ڈسٹرکٹ میں نئی بجلی کی کمپنیوں کو کام کرنے کی اجازت دی جائے تاکہ کراچی میں کے الیکٹرک کی اجارہ داری ختم ہو اور مختلف کمپنیوں کے درمیان مسابقت کی فضا ء قائم ہو۔ کوکب اقبال نے کہا کہ کنزیومر ایسوسی ایشن آف پاکستان کا مسابقتی کمیشن سے پرانا رابطہ ہے ہمیں ایک دوسرے کے ساتھ مل کر صارفین کے حقوق کے لیے کام کرنا ہوگا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...