عیدالاضحی: آڑھتیوں سے پرچی فیس وصولی پر پابندی‘ مافیا کیخلاف کارروائی کا فیصلہ

عیدالاضحی: آڑھتیوں سے پرچی فیس وصولی پر پابندی‘ مافیا کیخلاف کارروائی کا ...

ملتان ‘ خانیوال( سٹاف رپورٹر‘ نمائندہ پاکستان) منڈی مویشیاں اور بکر منڈی سج گئیں۔ قربانی کے جانوروں کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگیں۔قصابوں کا کاروبار(بقیہ نمبر46صفحہ7پر )

ٹھنڈا پڑ گیا ۔ تفصیل کے مطابق ملتان میں گزشتہ روز منڈی مویشیاں ناگ شاہ پل بلیل اور بکر منڈی ناگ شاہ چوک میں بیل ‘ گائے ‘ بچھڑے‘ بکرے ‘ دنبے ‘ اونٹ کی قیمتیں آسمان سے باتیں کر رہی ہیں ۔ بیل او ر بکروں کے بیوپاری منہ مانگے دام مانگ رہے ہیں ۔ بکروں کی جوڑیوں کی ایک لاکھ روپے سے زائد قیمت مانگی جا رہی ہے۔بیل کے بھی 50ہزار روپے سے ایک لاکھ روپے اور اس سے بھی زائد مانگے جا رہے ہیں ۔ گزشتہ روز بیشتر شہری قیمتیں سن کر واپس لوٹ گئے ۔دریں اثنا ملتان میں دولت گیٹ گودڑی کے باہر اور حضوری باغ روڈ پر بکرے فروخت کرنے والوں کا رش رہا جبکہ شہر میں جگہ جگہ گھوم پھر کر بھی دنبے ‘ چھترے ‘ مینڈھے اور بکرے ‘ بکریاں فروخت کئے جاتے رہے۔ادھر ڈپٹی کمشنر ملتان مدثر ریاض نے عید الاضحی کے لئے بکر منڈیا ں قائم کرنے کا حکم دے دیا ہے۔میونسپل کارپو ریشن اور ضلع کونسل کو اپنی حدود میں مخصوص مقامات پر قربانی کے جانوروں کے سیل پوائنٹ بنانے کے لئے کہا گیا ہے۔ حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ بکر منڈیاں یکم ذی الحجہ سے 10ذی الحجہ تک قائم کی جائیں اور وہاں بیوپاریوں اورخریداروں کے لئے تمام سہولیات فراہم کی جائیں ۔اس سلسلے میں فوری طور پر اقدامات کرکے رپورٹ پیش کی جائے جبکہ عید الاضحی کے موقع پر بکر منڈیوں میں آڑھتیوں اور شہریوں سے کوئی چارجز وصول نہیں کئے جائیں گے۔اس حوالے سے ضلع انتظامیہ نے حکم جاری کر دیا ہے کہ کسی بھی قسم کی شکایت ملنے کی صورت میں سخت کارروائی کی جائے گی۔ واضح رہے کہ اس سے قبل عید الاضحی کے موقع پر پرچی فیس سمیت مختلف حربوں سے آڑھتیوں ‘ بیوپاریوں اور خریداروں سے رقو م وصولی کی جاتی تھیں جس کا ڈپٹی کمشنر ملتان نے سخت نوٹس لیا ہے۔ ادھر عیدالضحیٰ کے پیش نظر خانیوال میں جانوروں کی منڈیاں لگ گئیں ہیں‘ دوردراز کے علاقوں سے بیوپاری منڈیوں کا رُخ کررہے ہیں۔ جانوروں کی خرید وفروخت کیساتھ ساتھ قیمتوں میں بھی ہوشربا اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے جس کے باعث شہری مشکلات کا شکار ہیں بیوپاریوں کے مطابق جانوروں کو منڈیوں تک لانے اور ان کے دیگر اخراجات کے باعث جانوروں کی قیمتوں میں اضافہ کرنا پڑتا ہے ۔

پرچی فیس پر پابندی

مزید : ملتان صفحہ آخر