مویشی منڈی سج گئی، جانوروں کی ہو شر با قیمتوں سے خریدار پریشان

مویشی منڈی سج گئی، جانوروں کی ہو شر با قیمتوں سے خریدار پریشان

کراچی(اسٹاف رپورٹر)کراچی میں ایشیاء کی سب سے بڑی مویشی منڈی سج گئی ہے۔عیدالاضحی کے موقع پر سپر ہائی وے پر قربانی کے جانوروں کے لیے قائم کی جانے والی ایشیاء کی سب سے بڑی مویشی منڈی سج گئی ہے جبکہ مویشی منڈی میں جانوروں کی آمد کا سلسلہ بھی بدستور جاری ہے۔مویشی منڈی کے ایڈمنسٹریٹر طاہر میمن نے بتایاکہ ملک کے مختلف علاقوں سے مویشی منڈی میں اب تک ایک لاکھ کے قریب قربانی کے جانوروں لائے جا چکے ہیں ، مویشی منڈی کے سروے کے دوران خریدار کہتے ہیں کہ اس سال تو تمام بیوپاری لاکھوں میں بات کر رہے ہیں ، ابھی منڈی کا صرف آغاز ہوا ہے ہو سکتا ہے کہ کچھ دنوں میں قیمتیں کچھ کم ہوں تو ہم باآسانی مالی حیثیت کے مطابق اور پسند کا جانور خرید سکیں جبکہ دوسری جانب منڈی میں انتظامات کے حوالے سے بیوپاریوں کی ملی جلی رائے سامنے آئی کسی کا کہنا تھا کہ مجموعی طور پر مویشی منڈی کے انتظامات سے کچھ مطمئن ہیں تو کئی بیوپاری پانی کی دستیابی کے حوالے سے شکایت کرتے ہوئے دکھائی دیے۔مویشی منڈی کے ایڈمنسٹریٹر محمد طاہرکے مطابق پچھلے سال کی نسبت اس سال بہتر انتظامات کیے گئے ہیں، منڈی میں بجلی، پانی، جنریٹرز، پارکنگ ایریا، اے ٹی ایمز مشین ، ہوٹلز اور واش رومز بنائے گئے ہیں اورخصوصی طور پر ممکنہ بارشوں کے حوالے سے اسٹینڈ بائے ہیوی مشینریز اور عملہ موجود ہے۔انھوں نے بتایا کہ انتظامیہ کے مطابق مویشی منڈی میں سیکیورٹی کے لیے 300 افراد کو تعینات کیا گیا ہے جبکہ لائیو اسٹاک و ہسبنڈری ڈاکٹروں اور پیرا میڈیکل عملے پر مشتمل 3 ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں جو 24 گھنٹے مویشی منڈی میں موجود ہوتی ہیں ، مویشی منڈی میں قائم کیے جانے والے وی آئی پی بلاکس میں لائے جانے والے قربانی کے خوبصورت ، صحت مند اور بھاری بھرکم گائے و بیلوں کو دیکھنے کے لیے شہریوں کی بڑی تعداد نے مویشی منڈی کا رخ کیا ہوا ہے اوراتوار کی رات مویشی منڈی میں پارکنگ ایریا میں گاڑیاں کھڑی کرنے کی گنجائش کم پڑ گئی جبکہ رات گئے تک شہریوں کا مویشی منڈی آمد کا سلسلہ جاری تھا جس کی وجہ سے مویشی منڈی ایک میلے کی شکل اختیار گئی جبکہ سیکیورٹی کے بہترین انتظامات کے باعث آنے والوں میں خواتین اور بچوں کی بھی بڑی تعداد رات گئے تک مویشی منڈی میں گھومتے ہوئے دکھائی دیئے

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر