مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنا غیر قانونی ہے،ڈی سی چارسدہ

مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنا غیر قانونی ہے،ڈی سی چارسدہ

  

چارسدہ(بیو ر و رپورٹ) ڈپٹی کمشنر عدیل شاہ نے کہا ہے کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنا غیر قانونی اقدام ہے اور کشمیر کے مسلمانوں سے جینے کا حق چھینے کے مترادف ہے۔آج پاکستانیوں نے ثابت کر دیا ہے کہ کشمیر پاکستان کا حصہ تھا اور ہمیشہ رہے گا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے بھارت کی جانب سے جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کا ایک سال مکمل ہونے پر یوم استحصال کے موقع پر منعقدہ ریلی سے خطاب کے دوران کیا۔ریلی میں اسسٹنٹ کمشنر عدنان جمیل،اے ڈی سی،محکمہ تعلیم،صحت،پولیس،سپورٹس،ایری گیشن ٹی ایم اے اور متعدد دیگر سرکاری محکموں کے سربراہان سمیت مختلف سیاسی و سماجی حلقوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ ریلی ٹی ایم اے چارسدہ سے شروع ہوئی جو تحصیل بازار کے مختلف شاہراہوں سے ہو کر فاروق اعظم چوک میں اہتمام پذیر ہو گئی۔اس موقع پر کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لئے ایک منٹ کی خاموشی احتیار کی گئی جبکہ کشمیر یوں پر بھارتی مظالم کی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی۔ ریلی کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر چارسدہ عدیل شاہ کا کہنا تھا کہ آج بھارت کی جانب سے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم ہونے کو ایک سال مکمل ہو گیا ہے جو کہ بھارت کی جانب سے ایک غیر قانونی،غیر اخلاقی اور غیر آئینی اقدام ہے جس کی پہلے دن سے پاکستان نے مذمت شروع کی ہے اور آج ایک سال مکمل ہونے پر ملک کے تما م مسلمانوں نے یہ ثابت کردیا کہ کشمیر پاکستان کا حصہ ہے اور ہمیشہ رہے گا۔ڈپٹی کمشنر عدیل شاہ نے مزید کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنا کشمیر کے مسلمانوں سے جینے کا حق چھیننے کے مترادف ہے جس کے خلاف ہر پلیٹ فارم پر آواز اٹھائی جائے گی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -